The news is by your side.

Advertisement

طیبہ تشدد کیس، اسلام آباد ہائیکورٹ کا ایڈیشنل سیشن جج کے خلاف باقاعدہ انکوائری کا فیصلہ

اسلام آباد : طیبہ تشدد کیس میں اسلام آباد ہائیکورٹ کا ایڈیشنل سیشن جج کے خلاف باقاعدہ انکوائری کا فیصلہ کیا ہے۔

تفصیلات کے مطابق طیبہ تشدد کیس میں اہم پیشرفت ہوئی، اسلام آبادہائیکورٹ نےایڈیشنل سیشن جج کےخلاف باقاعدہ انکوائری کا فیصلہ کرلیا ہے، ایڈیشنل سیشن جج خرم راجہ کے خلاف کارروائی کا آغازآئندہ ہفتے ہوگا۔

انکوائری کی سربراہی اسلام آباد ہائیکورٹ کے جسٹس محسن اختر کیانی کریں گے۔

سپریم کورٹ میں کمسن ملازمہ طیبہ پر کیے جانے والے تشدد کے از خود نوٹس کیس کی سماعت ہوئی تھی ، کیس کی سماعت کے بعد عدالت نے طیبہ کو سوئیٹ ہوم کے حوالے کرنے کا حکم دے دیا۔

تشدد کی شکار بچی طیبہ کی میڈیکل رپورٹ تیار کی گئی، جس کے مطابق بچی پر تشدد کیا گیا اور اس کے بازو، ٹانگوں، کمر اور آنکھوں کے گرد مار پیٹ اور جھلسنے کے نشانات ہیں۔


مزید پڑھیں : طیبہ تشدد کیس، ایڈیشنل سیشن جج کو کام سے روک دیا گیا


اس سے قبل اسلام آباد ہائی کورٹ نے 10 سالہ بچی طیبہ تشدد کیس میں نامزد ایڈیشنل ڈسٹرکٹ اینڈ سیشنز جج راجہ خرم علی خان کو عدالتی امور کی انجام دہی سے روک دیا تھا، راجہ خرم علی اسلام آباد میں ایڈیشنل سیشن جج ایسٹ کے طور فرائض انجام دے رہے تھے۔

واضح رہے کہ 29 دسمبر 2016 کو ایڈیشنل ڈسٹرکٹ اور سیشنز جج راجہ خرم علی خان کے گھر سے مبینہ طور پر تشدد کا شکار کمسن گھریلو ملازمہ طیبہ کو پولیس نے بازیاب کرایا تھا اور بعد ازاں راجہ خرم علی خان اور ان کی اہلیہ کے خلاف ایف آئی آر درج کی گئی تھی۔

Print Friendly, PDF & Email

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں