The news is by your side.

Advertisement

‏’اڈے نہ دینے اور جنگ کا حصہ نہ بننے پر عمران خان کا مشکور ہوں‘‏

افغانستان کے سابق وزیراعظم گلبدین حکمت یار نے کہا ہے کہ عمران خان نے جرات مندانہ طور پر کہا افغان جنگ ‏میں جاناغلطی تھی عمران خان کےبیسزنہ دینےاورجنگ کاحصہ نہ بننےکےاعلان پرمشکورہیں بھارت کو چاہیے وہ ‏بھی اس سےسیکھے، افغانستان کیخلاف ایک اورسازش کی جارہی ہے پنجشیرمیں اب بھی بہت سے ممالک شرارت کر ‏رہے ہیں۔

ان خیالات کا اظہار حزب اسلامی کے سربراہ گلبدین حکمت یار نے اے آر وائی نیوز کے پروگرام پاورپلے کے ‏میزبان ارشد شریف کو دیے گئے خصوصی انٹرویو میں کیا۔

بڑا ہدف ‏

انہوں نے کہا کہ افغان عوام خوش ہیں کیونکہ ایک بڑا ٹارگٹ حاصل کرلیاہے غیرملکی افواج کا افغانستان سےانخلا ‏ہو چکا ہے افغانستان میں جنگ کاخاتمہ ہوگیاہے مستقبل سےمتعلق عوام کوفیصلہ کرنےکاحق مل گیاہے طالبان ‏نےافغانستان میں عبوری حکومت کااعلان کیاہے گزشتہ حکومت کےبعدایک خلاپیداہوگئی تھی جو پُرکرنا تھی ہمارا ‏بھی مشورہ تھا کہ فوری طور پر عبوری حکومت بنانی چاہیے۔

حکومت ایک پارٹی کے پاس ہو

سابق وزیراعظم نے کہا کہ تجویزتھی مشاورت کرکےآئندہ کےلائحہ عمل کا اعلان کیاجائے چاہتےہیں ایسی ‏حکومت بنائیں جس کوعوام کی حمایت حاصل ہو مشاورت کے بغیربنائی گئی حکومتیں ناکام ہوتی ہیں ہم ‏چاہتےہیں حکومت متحداورایک ہی پارٹی کےپاس ہو کیونکہ حکومت تقسیم ہوتی ہےتواس سےنقصان ہوتاہے ‏حکومت میں سب کوشامل کرلیں توکسی کافائدہ نہیں ہوگا۔

انہوں نے بتایا کہ 2016 میں ایک معاہدہ کیا گیا تھا جو توڑا گیا تھا افغان حکومت چاہتی تھی ان سےمل کرطالبان ‏کیخلاف لڑیں، غیرملکی افواج بھی چاہتی تھی کہ ہم طالبان کیخلاف لڑیں اور حزب اسلامی طالبان کیخلاف لڑ کر ‏غلطی نہیں کرنا چاہتی تھی ہم نےغیرملکی افواج کیخلاف طویل جنگ لڑی ہے۔

پنجشیر میں یہودیوں کی سازش

گلبدین حکمت یار نے کہا کہ ماضی میں بھی پنجشیرسےفائدہ اٹھایاگیاابھی بھی شرارت کی گئی، دشمن احمد ‏مسعود اور پنجشیر کو شرارت کے طور پر استعمال کر رہے تھے ایک یہودی جاسوس احمد مسعود کو پنجشیر ‏کیلئے اکسا رہا تھا یہ وہی یہودی ہےجس نے ترکی میں کردوں کواکسایا یہ وہی یہودی جاسوس ہےجس نے عراق ‏میں فسادپیداکیا امریکا میں ایک گروپ ہے جو پنجشیرمزاحمت کی حمایت کررہاتھا پنجشیرمیں مزاحمت والے ‏چاہتے تھےکہ امریکا دوبارہ آجائے طالبان نے پنجشیرمیں کامیابی حاصل کی جوبڑی بات ہے بڑی تعدادمیں اسلحہ ‏و گولہ بارودملا، پنجشیر میں اتنے بڑے پیمانے پر اسلحہ کیسےپہنچاسوالیہ نشان ہے پنجشیرکےعوام ان سےنفرت ‏کرتے ہیں جو غیرملکیوں کی راہ ہموار کر رہے تھے لیکن پنجشیرمیں افغانستان دشمنوں نےشرارت کی جوناکام رہی، ‏احمد مسعود کے گروپ کو وزیردفاع بنایا گیا تھا جو اسلحہ پنجشیرپہنچاتارہا۔

مودی غلطیوں کا اعتراف کرے

ان کا کہنا تھا کہ نیٹوکی حمایت کے بدلے بھارت کوافغانستان میں کھلامیدان ملا بھارت نےافغانستان میں اپنے ‏مفادات کیلئے بھرپور کام کیا مودی کوچاہیےوہ افغانستان میں اپنی غلطیوں کااعتراف کرے۔

عمران خان کا مشکور

حزب اسلامی کے سربراہ نے کہا کہ وزیراعظم عمران خان کےمؤقف کی حمایت اوران کامشکوربھی ہوں عمران ‏خان نےواضح مؤقف اپنایاکہ افغانستان میں جنگ نہیں ہونی چاہیے عمران خان نےواضح کہاافغانستان سےمتعلق ‏جنگ کاحصہ نہیں پاکستان نےافغانستان میں امن کےلیےاہم کردارادا کیاہے عمران خان نےکہاہماری سرزمین کسی ‏ملک کیخلاف استعمال نہیں ہوگی عمران خان کےمؤقف کی حمایت کرتےہیں اوران کےمشکورہیں۔

امریکی شرارت ‏

گلبدین حکمت یار نے کہا کہ امریکا اور امریکا کے دوستوں نےشرارت کاراستہ اختیار کیا ہے افغانستان کےبیرونی ‏اثاثہ جات منجمدکرنےکی باتیں کی جارہی ہیں افغانستان کوعالمی سطح پرتنہاکرنےکی کوشش کی جا رہی ہے افغان ‏عبوری حکومت پر دباؤ ڈالنےکیلئے امریکا شرارت کر رہا ہے دباؤقبول کرنےکی صورت میں امریکا اپنی شرائط منوا ‏سکے گا افغان عوام کویقین دلاتاہوں افغانستان کامستقبل روشن ہے افغانستان میں ایسے وسائل ہیں جس پر بہت ‏ممالک کی نظریں ہیں چاہتےہیں ایسی حکومت بنےجس کی پالیسیاں آزاد اور خودمختار ہوں۔

ملک سے جانے والوں کو واپس لائیں

ایک سوال کے جواب میں ان کا کہنا تھا کہ طالبان کوبھی مشورہ ہے کسی کی شرائط نہ مانیں اپنی شرائط رکھیں ‏اپنی شرائط رکھیں گےتوکوئی افغانستان میں مداخلت نہیں کرسکےگا ایسےممالک افغان عوام کی بنائی گئی ‏حکومت کو قبول کریں گے افغانستان میں جوتباہی کی گئی اس کامداوا ہونا چاہیے طالبان کو چاہیےجو عوام ملک ‏سےگئےانہیں واپس لائیں اورمل کر رہیں پہلی ترجیح ہےقیام امن اورداخلی مشکلات کاحل نکالاجائے سازگارماحول ‏بنایاجائےتاکہ مستقبل کیلئےبحث ومباحثہ ہو،جنگ کیلئےصرف اسلحہ نہیں،مورال اورارادہ بھی ہوناچاہیے جنگ ‏کسی خاص مقصد کیلئے نہ ہوتووہ کبھی جیت نہیں ہوتی۔

امریکا کابل ایئرپورٹ تباہ کر گیا

کابل ایئرپورٹ سے متعلق انہوں نے کہا کہ بڑی طاقتیں افغانستان آئیں لیکن عوام پرحکمرانی نہیں کرسکی افغان ‏عوام آزادی چاہتےہیں اور آزاد رہنا چاہتے ہیں گوریلاوارمیں کوئی اسلحہ یاوسائل کام نہیں آتے سوویت یونین ‏اور امریکا دونوں نےافغانستان پرحملےکی غلطی کی، سوویت یونین کابھاگنےکاطریقہ امریکاسےبہترتھا جنگ ‏سےبھاگناکسی بھی صورت اچھی نہیں بلکہ شرمندگی ہے سوویت یونین کےجنرل نےکہاتھاافغانستان پرحملہ روس ‏کی غلطی تھی، امریکا ایسے حالات میں بھاگا کہ پورےایئرپورٹ کوتباہ کردیا، امریکانےبھاگنےکےدوران بھی 300 ‏افغان شہریوں کو زخمی کیا، کابل ایئرپورٹ پر شیشے،کرسیاں تک توڑدیں، امریکی صدرنےکہاافغانستان میں 3لاکھ ‏فوج موجودہے۔

Comments

یہ بھی پڑھیں