The news is by your side.

Advertisement

جنسی زیادتی کے مجرم کو نامرد بنانے کا قانون غیراسلامی قرار

اسلامی نظریاتی کونسل نے جنسی زیادتی کے مجرم کو نامرد بنانے کا قانون غیراسلامی قرار دیتے ‏ہوئے اس کی جگہ متبادل مؤثر سزائیں تجویز کرنے کی سفارش دی ہے۔

چیئرمین قبلہ ایاز کی زیرصدارت ہونے والے اسلامی نظریاتی کونسل کے اجلاس کا اعلامیہ جاری کر ‏دیا گیا جس کے مطابق تعلیمی اداروں اور جامعات میں غیراخلاقی واقعات سامنے آنے پر تشویش ‏کا اظہار کیا گیا۔

اخلاقی اقدار کی بحالی کیلئے متعلقہ اداروں کو خطوط بھیجنےکا فیصلہ کیا گیا ہے۔ دینی مدارس ‏کےوفاقوں اور ہائر ایجوکیشن کمیشن کوخطوط بھیجےجائیں گے۔ وفاقی وزارت تعلیم، صوبائی تعلیم ‏کی وزارتوں اور وفاق المدارس کو بھی خط لکھنےکافیصلہ کیا گیا ہے مدارس میں اس موضوع پر ‏کھلے مکالمےاور مباحثوں کی تجویز ہے ساتھ ہی قومی تعلیمی کانفرنس بلانے کی تجویز دی جائے ‏گی۔

تعلیمی اداروں میں عربی لازم کرنے کےبل 2020کی تائید کرتے ہوئے کہا گیا ہے کہ عربی زبان کی ‏تدریس کیلئے اقدامات کرنا دینی اورآئینی تقاضا ہے امید ہے یہ بل اس کی طرف پہلاقدم ثابت ہوگا۔

ثانوی تعلیمی اداروں میں بطوراختیاری مضمون فارسی کونصاب میں شامل کیاجائے بطوراختیاری ‏مضمون ترکی اور چینی زبان کوبھی نصاب میں شامل کیاجائے۔

خیبرپختونخوامیں تنازعات کےمتبادل حل کیلئےمسودہ بل کی بھی تائید کی گئی اور مسودے میں ‏چند ترامیم کی سفارش بھی پیش کی گئی۔ کونسل نےرحمۃ للعالمین اتھارٹی کےقیام کو مستحسن ‏قدم قرار دیا۔

Comments

یہ بھی پڑھیں