The news is by your side.

Advertisement

بلڈ شوگر بہتر رکھنے کا جادوئی نسخہ

آپ کے روزمرہ زندگی میں اگر زیادہ وقت بیٹھ یا سو کر گزرتا ہے تو ممکنہ طور پر آپ مختلف پیچیدہ مسائل کا شکار ہوسکتے ہیں، انسانی جسم کا حرکت میں رہنا صحت کے لیے مفید ہوتا ہے۔

یورپی ملک سوئیڈن میں ہونے والی طبی تحقیق میں کہا گیا ہے کہ اگر آپ دفتر میں کام کرتے ہیں تو اپنی کرسی سے ہر آدھے گھنٹے بعد اٹھنے سے بلڈ شوگر لیول اور مجموعی صحت بہتر رہتی ہے، بڑھتی عمر کے ساتھ بلڈ شوگر کو معمول پر اور اچھی صحت کے خواہشمند افراد اس عادت کو اپنی زندگی کا حصہ بنا لیں۔

کیرولینسکا انسٹیٹوٹ کی تحقیق کے مطابق بیٹھ کر یا لیٹ کر گزارے جانے والا ہر گھنٹہ میٹابولک سینڈروم اور ذیابیطس ٹائپ ٹو کا خطرہ بڑھانے کا باعث بنتا ہے، اسی لیے ہر آدھے گھنٹے بعد اٹھنے کی عادت بنائیں۔

طبی تحقیق میں بتایا گیا کہ ہر تھوڑی دیر بعد اٹھ کر کچھ وقت چلنا انسولین کی حساسیت کو بہتر بنانے اور میٹابولک سینڈروم کا خطرہ کم کرتا ہے، میٹابولک سینڈروم مختلف عوارض کے مجموعے کو کہا جاتا ہے۔

انسانوں میں میٹابولک سینڈروم امراض قلب، ذیابیطس، فالج اور دیگر طبی مسائل کا خطرہ بڑھاتا ہے۔ ہر 30 منٹ بعد 3 منٹ کی چہل قدمی سے بلڈ شوگر کی سطح میں معمولی بہتری آتی ہے۔

مشاہدے میں یہ بھی کہا گیا کہ جلتا زیادہ وقفے وقفے سے چلیں گے اتنا صحت کے لیے بہتر ہوگا، سست طرز زندگی سے بچنا میٹابولک فوائد کا باعث بنتا ہے۔ اس تجرے کے لیے ماہرین نے 16 موٹاپے کے شکار افراد کو اپنی تحقیق کا حصہ بنایا، یہ وہ لوگ تھے جو اپنی زندگی کا زیادہ وقت بیٹھ کر گزارتے تھے۔

تحقیق کے دوران ان افراد کو 3 ہفتے تک ہر دن 10 گھنٹے ہر 30 منٹ بعد اٹھ کر 3 منٹ تک چلنے یا سیڑھیاں چڑھنے کی ہدایت کی گئی اور پھر ان افراد کی سرگرمیوں کے فوائد کا موازنہ ان افراد سے کیا جو اس طرح کے وقفے نہیں لے رہے تھے۔ جس کے بعد مذکورہ بالا نتائج سامنے آئے۔

Comments

یہ بھی پڑھیں