The news is by your side.

Advertisement

بزدار حکومت نے ایک اور تاریخ ساز سنگ میل عبور کر لیا

لاہور: پنجاب حکومت نے پاکستان کے ایک اور تاریخی منصوبے ‘100 میگاواٹ سولر پراجیکٹ’ پر دستخط دیے جس کے ذریعے صوبے کو کم ترین نرخ پر بجلی ملے دی۔

تفصیلات کے مطابق لیہ کے علاقے چوبارہ میں ‘100 میگاواٹ کا سولر پراجیکٹ’ پر دستخط کی تقریب منعقد ہوئی، جہاں منصوبے پر دستخط ہوئے، وزیراعلیٰ پنجاب عثمان بزدار اور وفاقی وزیر توانائی عمر ایوب مہمان خصوصی تھے۔

تقریب سے خطاب کرتے ہوئے عثمان بزدار کا کہنا تھا کہ حکومت پنجاب اس منصوبے میں صرف 3.7سینٹ کے نرخ پر بجلی خریدے گی، اس منصوبے سے نیشنل گرڈ کو 17 کروڑ30لاکھ یونٹ بجلی فراہم کی جائے گی، یہ بجلی تقریباً 70ہزار گھروں کی ضرورت کو پورا کرنے کے لیے کافی ہوگی۔

انہوں نے کہا کہ پنجاب میں ویسٹ ٹوانرجی پراجیکٹ کا بھی جائزہ لے رہے ہیں، انرجی سے نہ صرف عام شہری مستفید بلکہ صنعتوں کا پہیہ بھی چلتا ہے، پنجاب میں توانائی کی ضروریات باقی صوبوں کی نسبت زیادہ ہے، آئین کے تحت توانائی کی ضروریات حاصل کرنے کے لیے کوشاں ہیں، بجلی کی ملکی پیداوار کا تقریباً70فیصدپنجاب میں استعمال ہوتا ہے۔

وزیراعلیٰ کا کہنا تھا کہ بجلی سے حاصل کل آمدنی کا 82فیصد ریونیو پنجاب ادا کرتا ہے۔

تقریب سے خطاب میں انہوں نے کہا کہ ماضی کے برعکس ہماری حکومت سستی بجلی کے دیرپاذرائع کی طرف گامزن ہے، سابق حکومت نے انرجی کے مہنگے منصوبے لگائے جس سے عوام پر بوجھ پڑا، تعلیمی ادارے، صحت مراکز اور سرکاری عمارتوں کو سولر پر منتقل کیا جائے گا، 950مراکز صحت کو سولر پر منتقل کرنے کے منصوبے پر کام جاری ہے۔

ان کا مزید کہنا تھا کہ حکومت پنجاب اربوں روپے کی بچت کی پالیسی پر عمل پیرا ہے، انرجی سیکٹرمیں سرمایہ کاری کے بےشمار مواقع ہیں، ون ونڈوآپریشن سے سرمایہ کاروں کو سہولتیں دی جارہی ہیں۔

Comments

یہ بھی پڑھیں