The news is by your side.

Advertisement

خصوصی عدالت کا فیصلہ غیرقانونی ہے جس کی مذمت کرتا ہوں، اٹارنی جنرل

اسلام آباد: اٹارنی جنرل آف پاکستان انور منصور نے کہا ہے کہ پرویز مشرف سے متعلق خصوصی عدالت کےتفصیلی فیصلےکو کسی صورت قبول نہیں کرسکتے، حکومت ان ججز کے خلاف ایکشن لے گی۔

اے آر وائی نیوز سے خصوصی گفتگو کرتے ہوئے اٹارنی جنرل نے کہا کہ خصوصی عدالت کا فیصلہ غیرقانونی، غیرآئینی اور غیر اخلاقی ہے جس کی سختی سے مذمت کرتا ہوں۔

انہوں نے کہا کہ خصوصی عدالت کےتفصیلی فیصلےکو کسی صورت قبول نہیں کرسکتے، حکومت ان ججز کے خلاف ایکشن لے گی اور متعلقہ جج کے خلاف آرٹیکل 209کے تحت ایکشن لیا جائے گا۔

یہ بھی پڑھیں: پرویز مشرف کے خلاف آئین شکنی کیس کا تفصیلی فیصلہ جاری

ان کا کہنا تھا کہ تفصیلی فیصلےسے ظاہر ہے یہ دشمنی کی بنیاد پر دیا گیا، خصوصی عدالت کے فیصلےسے ادارے پر بھی گہری چوٹ لگی ہے ،اس فیصلے میں افواج پاکستان کو بھی اٹیک کیا گیا ہے۔

انور منصور کا مزید کہنا تھا کہ ایساشخص جس کا دماغی توازن مناسب نہیں اسےجج نہیں رہناچاہیے، جو آئین، قانون اور اسلام کیخلاف فیصلے دے ایسے شخص کو جج نہیں رہناچاہیے، استنبول سے واپس آکر فیصلے کیخلاف اقدامات کروں گا، فیصلہ کالعدم قرار دینے کیلئے درخواست دی جائیگی جس کی قانون اجازت دیتا۔

Comments

یہ بھی پڑھیں