The news is by your side.

Advertisement

کروڑ پتی شخص کیسے پائی پائی کا محتاج ہوا؟ جانئے آپ بیتی

بہار سے تعلق رکھنے والے سشیل کمار نے “کون بنےگا کروڑ پتی” کے پانچویں سیزن کو جیتنے کے بعد سرخیوں میں جگہ بنائی، لیکن کے بی سی سیزن جیتنے کے بعد ان کی زندگی بدل گئی اور وہ جلد ہی دیوالیہ ہوگئے۔

سشیل کمار نے فیس بک پر کے بی سی 5 جیتنے کے بعد اپنی مشکلات اور جدوجہد کو بیان کیا، فیس بک پوسٹ میں لکھے گئے پوسٹ کا عنوان ‘کون بنےگا کروڑ پتی جیتنے کے بعد میری زندگی کا بدترین مرحلہ’ ہے۔

سشیل کمار نے بتایا کہ سال دوہزار پندرہ سے سولہ میری زندگی کا مشکل ترین وقت تھا، میں نہیں جانتا تھا کہ کیا کروں، مقامی سلیبریٹی ہونے کی وجہ سے میں بہار میں کہیں نہ کہیں مہینے میں دس یا بعض اوقات پندرہ دن کے پروگراموں میں شرکت کرتا، اس کے نتیجے میں میں پڑھائی سے دور ہو رہا تھا۔

چونکہ میں مقامی طور پر ایک جانی پہچانی شخصیت تھا، اس لیے میں نے ان دنوں میڈیا کو بہت سنجیدگی سے لیا، در حقیقت بعض اوقات صحافی میرے بارے میں انٹرویو کرتے اور میں ان کے ساتھ کس طرح بات کروں اس کے کسی تجربے کے بغیر میں ان کو کسی کاروبار یا دوسرے کے بارے میں بتا دیتا جس میں میں شامل تھا ، تاکہ میں بے روزگار نہ ہوں، تاہم وہ کاروبار کچھ دنوں کے بعد ختم ہوگئے۔

کے بی سی کے بعد میں ایک طرح سے انسان دوست بن گیا تھا جو ‘خفیہ عطیات’ کا عادی تھا اور اسی وجہ سے میں ایک مہینے میں تقریبا 50 ہزار تقریبات میں شرکت کروں گا۔ اس کی وجہ سے کئی بار لوگوں نے میرے ساتھ دھوکہ کیا، جس کا مجھے چندہ دینے کے بعد ہی پتہ چلا، ان سب کی وجہ سے میری بیوی کے ساتھ میرے تعلقات آہستہ آہستہ خراب ہوئے، وہ کہتی تھی کہ میں صحیح اور غلط لوگوں میں فرق کرنا نہیں جانتا اور مجھے مستقبل کی فکر نہیں ہے، اس بات پر ہم اکثر لڑتے تھے۔

اس رات جب میں فلم ‘پیاسا’ دیکھ رہا تھا جو کہ اپنے کلائمیکس سین کی طرف تھی، میری بیوی نے چیخ کر کہا کہ میں بار بار وہی فلم دیکھ کر پاگل ہو جاؤں گا، اس نے کہا کہ اگر میں جاری رکھنا چاہتا ہوں تو مجھے کمرہ چھوڑنا ہوگا۔ میں اداس تھا کیونکہ ہم نے ایک مہینے سے بات نہیں کی تھی اور جس طرح ہم نے آخر کار کیا، اس کا مطلب تھا کہ ہم مزید بات نہیں کرنے والے تھے، لہذا میں نے اپنا لیپ ٹاپ بند کر دیا اور ٹہلنے کے لیے باہر چلا گیا۔

جب میں ٹہل رہا تھا، ایک انگریزی اخبار کے صحافی نے فون کیا، جب سب کچھ ٹھیک چل رہا تھا، اچانک اس نے مجھ سے کچھ پوچھا جس کی وجہ سے میں چڑچڑا ہو گیا، تو میں نے بے ترتیب اسے بتایا کہ میرے تمام پیسے ختم ہو چکے ہیں اور میرے پاس دو گائیں ہیں اور میں دودھ بیچ کر اس سے کچھ پیسے کما رہا ہوں، اور اس کے بعد آپ سب کو اس خبر کے اثرات سے آگاہ ہونا چاہیے۔

کافی سوچ بچار کے بعد میں نے فلم ڈائریکٹر بننے کا خواب دیکھنا شروع کر دیا تھا۔ اس دوران میری اور میری بیوی کی زبردست لڑائی ہوئی جس کے بعد وہ اپنے والد کی جگہ چلی گئی اور طلاق کا مطالبہ کیا۔ پھر میں نے محسوس کیا کہ اگر اس رشتے کو بچانے کا کوئی طریقہ تھا، تو یہ تھا کہ باہر جا کر ایک فلم ڈائریکٹر بنوں اور اپنے لیے ایک نئی شناخت کے ساتھ واپس آؤں۔

بعد ازاں میں نے ایک پروڈیوسر دوست سے بات کی، جس نے مجھ سے کچھ تکنیکی سوالات پوچھے جن کا میں جواب دینے سے قاصر تھا، بعد میں اس نے کہا کہ مجھے کچھ دنوں کے لیے ٹیلی ویژن میں کام کرنا چاہیے اور وہ مناسب وقت پر مجھے ایک فلم پروڈیوسر کے ساتھ کام دے گا۔

اس کے فورا بعد میں نے ایک بڑے پروڈکشن ہاؤس میں کام کرنا شروع کر دیا، مجھے بہت سی چیزوں کے بارے میں معلوم ہوا ، کہانی ، اسکرین پلے ، ڈائیلاگ کاپی ، سہارا ، لباس ، دیگر چیزوں کے ساتھ ساتھ مواد۔ لیکن میں نے بے چینی محسوس کی کیونکہ وہاں صرف تین جگہیں تھیں – صحن ، کچن اور بیڈروم جہاں زیادہ تر شوٹنگ ہوتی تھی۔

میں فلم ڈائریکٹر بننے کے خواب کے ساتھ ممبئی آیا تھا ، لیکن پھر میں نے ایک دن یہ چھوڑ دیا اور اپنے ایک گیت نگار دوست کے ساتھ رہنا شروع کر دیا، میں کمرے میں لیٹ جاتا اور ایک کے بعد ایک فلم دیکھتا یا کتابیں پڑھتا جو میں اپنے ساتھ لایا تھا، یہ تقریبا چھ ماہ تک جاری رہا، چونکہ میں خود اکیلے رہ رہا تھا، یہاں مجھے اپنے آپ کو معروضی طور پر دیکھنے کا موقع ملا اور مجھے بہت سی چیزوں کا احساس ہوا۔

میں نے محسوس کیا کہ میں کوئی ایسا شخص نہیں جو ممبئی میں ڈائریکٹر بننے آیا ہوں ، بلکہ میں ایک مفرور ہوں جو سچ سے بھاگ رہا ہوں۔

حقیقی خوشی اپنی پسند کا کام کرنے میں ہے۔

کبھی تکبر جیسے جذبات انسان کو پرسکون نہیں کر سکتے

صرف ایک ‘بڑی شخصیت’ بننے سے ایک اچھا شخص بننا ہزاروں گنا بہتر ہے۔

خوشی چھوٹی چھوٹی چیزوں میں پوشیدہ ہے۔

لوگوں کو ہر ممکن حد تک مدد کرنے کی کوشش کرنی چاہیے جو کہ اس کے اپنے گھر/گاؤں سے شروع ہونی چاہیے۔

تاہم اس دوران میں نے تین اسکرپٹ لکھے جو ایک پروڈکشن ہاؤس نے پسند کیے اور اس کے لیے مجھے 20 ہزار روپے دیئے انہوں نے کچھ بہانوں سے ادائیگی کو جائز قرار دیا جیسا کہ فلم کا آئیڈیا بہت اچھا تھا ، لیکن ابھی بہت سا کام باقی ہے کہ کہانی پر ابھی کام کرنے کی ضرورت ہے اور کلائمیکس اچھا نہیں تھا وغیرہ

اس کے فوراً بعد میں ممبئی سے گھر واپس آیا اور استاد بننے کی تیاری کی۔

Comments

یہ بھی پڑھیں