The news is by your side.

Advertisement

ملک میں جمہوریت نہیں خاندانی بادشاہت قائم ہے،طاہر القادری

اسلام آباد : عوامی تحریک کے سربراہ ڈاکٹر طاہر القادری نے تحریک انصاف کے یوتھ کنونشن پر پولیس کا حملہ،خواتین سے بدتمیزی اور کارکنان کی گرفتاریوں کی شدید مذمت کرتے ہوئے کہا کہ یہ غیر سیاسی، غیر جمہوری اور غیر انسانی رویہ ہے۔


اے آر وائی نیوز سے ٹیلی فونک گفتگو کرتے ہوئے طاہر القادری کا کہنا تھا کہ یہ تو کنونشن ہورہا تھا وہاں تو دفعہ 144 بھی نہیں لگتی تو وہاں پکڑ دھکڑ کا کیا جواز تھا؟ یہ انسانیت کی توہین ہے، حکومت کو نظر کیوں نہیں آتا اپنی آنکھوں کا علاج کرائے۔

یہ بھی پڑھیں : طاہرالقادری نے اسلام آباد دھرنے میں شرکت کی دعوت قبول کرلی

طاہر القادری نے اسلام آباد میں پولیس گردی حکومت کی بوکھلاہٹ کا ثبوت ہے، یہ انسانی آزادی پر یقین نہیںرکھتے،جوکچھ انہوں نے ماڈل ٹائون میں کیا وہ پاکستان کی سترسالہ تاریخ کا بدترین واقعہ تھا کیا حکومت اسی نوعیت کا کوئی دوسرا واقعہ دہرانا چاہتی ہے؟۔

انہوں نے اس عزم کا بھی اعادہ کیا کہ ہم مرتے دم تک قصاص پر قائم رہیں گے، قصاص سے کم پر سمجھوتہ کرنا بے غیرتی ہے،یہ قصاص ان کے گلے کا پھندا ہے،ہم نے پاکستان تحریک انصاف کا ساتھ دینے کا اعلان کیا ہے اور ان کے ساتھ رہیں گے۔

انہوں نے کہا کہ آج پی ٹی آئی کے وفد کی عوامی تحریک سے ملاقات ہوئی ہے، اس حوالے سے جو بھی پیش رفت ہوگی ہے سب سے پہلے اے آر وائی نیوز کو بتائیں گے۔

انہوں نے کہا کہ میں ہر ظالم کے خاتمے کے لیے مظلوموں کے شانہ بشانہ میدان عمل میں ہوں،ہماری پوی جماعت میدان میں ہے اور میدان میں ہی رہے گی،احتجاج پی ٹی آئی کا ہو یا کسی بھی جماعت کا ، یہ جمہوری حق ہے، بدترین آمرانہ رویے کو کوئی برداشت نہیں کرے گا، ہم مرتے دم تک مظلوموں کے ساتھ ہیں۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں