The news is by your side.

Advertisement

ٹریفک سارجنٹ قتل کیس : ورثا کا انصاف کا مطالبہ

کوئٹہ : مقتول ٹریفک سارجنٹ عطاء اللہ کےورثا نے انصاف کا مطالبہ کرتے ہوئے دیت ملنے کی خبروں کو جھوٹ قرار دے دیا۔

تفصیلات کے مطابق کوئٹہ میں سابق رکن بلوچستان اسمبلی عبدالمجید اچکزئی کی گاڑی کی ٹکر سے جاں بحق ہونے والے مقتول ٹریفک سارجنٹ عطاء اللہ کے خاندان والوں نے انصاف کا مطالبہ کردیا۔

اے آر وائی نیوز سے جاں بحق سارجنٹ عطا اللہ کے بیٹے معظم نے گفتگو کرتے ہوئے کہنا ہے کہ واقعے کی سی سی ٹی وی سب سے بڑا ثبوت ہے ، سرکاری کیمروں کی فوٹیج ہی ہمیں انصاف دینے کے لئے کافی ہے ۔

معظم نے الزام لگایا کہ ملازمت کاوعدہ کیاگیامگر ایک افسر روڑے اٹکا رہا ہے۔

مزید پڑھیں :کوئٹہ کے مقتول ٹریفک سارجنٹ کے خاندان نے راضی نامے کی خبریں مسترد کر دیں

عطا اللہ کے بھائی عنایت اللہ نے دیت ملنے کی خبروں کو جھوٹ قرار دیتے ہوئے کہا فیصلہ ہمارے والدین نے کرناہے مگر ان سے کوئی ملنے نہیں گیا، گواہ منحرف ہوئے تھے کیونکہ یہاں کمزور کا ساتھ کوئی نہیں دیتا کمزور کا کوئی ساتھ نہیں دیتا۔

گذشتہ روز مقتول ٹریفک سارجنٹ عطا اللہ کے بھائی نے کہا تھا کہ مجید اچکزئی سے راضی نامہ ہوا ہے اور نہ ہی ہم نے دیت لی ہے، بھائی کو مارے جانے کی سی سی ٹی وی ویڈیو سب سے بڑا ثبوت ہے، اس لیے ہم نے ماڈل کورٹ کا فیصلہ اعلیٰ عدالت میں چیلنج کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔

واضح رہے کہ تین سال قبل پشتون خوا میپ کے سابق رکن اسمبلی مجید خان اچکزئی پر سارجنٹ عطا اللہ کو گاڑی کی ٹکر سے روندنے کا الزام تھا، اس حادثے کی ویڈیو بھی سوشل میڈیا پر وائرل ہوئی تھی، پولیس نے مجید اچکزئی کو گرفتار کر کے مقدمہ درج کیا تھا۔

تاہم چار دن قبل کوئٹہ کی ماڈل کورٹ نے ثبوت نہ ملنے کی وجہ سے مجید اچکزئی کو بری کر دیا تھا۔

Comments

یہ بھی پڑھیں