میں سڑکوں کا رکھوالا ہوں -
The news is by your side.

Advertisement

میں سڑکوں کا رکھوالا ہوں

مجھے سڑک سمجھ کر ٹائر تلے نہ روندو

صبح جب آپ کے اورمیرے بچے ابھی سورہے ہوتے ہیں،شہر کے ُامراءاور روساء ابھی گرم بستر کی سلوٹوں میں گم نرم وگداز زندگی کے پہلو میں دراز ہوتے ہیں۔۔۔ میں منہ اندھیرے گھر سے نکلتا ہوں۔ میرے بچے میری بیوی سے پوچھتے ہیں۔۔۔
مما۔۔۔بابانہیں آئے۔۔۔
اور وہ نیم مردہ ۔۔۔ تخت رات اجڑے سہاگ والی بیوہ کی طرح۔۔۔اداس آنکھوں۔۔۔مرجھائے چہرے۔۔۔ الجھے بالوں۔۔۔اور دوراندھے کنویںسے جیسے صدائے یوسف کی مانند۔۔۔نحیف ونزار آوازکےساتھ کہتی ہے۔۔۔
بٹیا آئے تھے۔۔۔مگرجلدی چلے گئے۔۔۔صبح ڈیوٹی پر جانا تھا۔۔۔
بیٹی پوچھتی ہے۔۔۔
ماما وہ رات کو بھی لیٹ آتے ہیں صبح بھی جلدی چلے جاتے ہیں۔۔۔ ابو کا دل نہیں کرتاہمیں ملنے کو۔۔۔
ٍ میری بیوی تھوڑا سا۔۔۔ مزید پریشان ہو جاتی ہے۔۔۔
کہتی ہے بٹیا ڈیوٹی ہے ناں۔۔۔آپ کے بابا۔۔۔سرکاری ملازم ہیں ناں۔۔۔
بیٹا کہتا ہے۔۔۔امی یہ سرکاری ملازم کیا ہوتا ہے۔۔۔
اور وہ نہ چاہتے ہوئے بھی کہتی ہے۔۔۔
بیٹا جو سرکار سے تنخواہ لیتا ہے۔۔۔اور لوگوں کی مدد کرتاہے۔۔۔ اور اس کی معاشرے میں بڑی عزت ہوتی ہے۔۔۔
بیٹی پوچھتی ہے۔۔۔
ماما۔۔۔کیاتنخواہ اور عزت کے لئے ضروری ہے کہ وہ ہفتہ ہفتہ ہمارا منہ نہ دیکھیں۔۔۔کیا تنخواہ اولاداورفیملی سے زیادہ بڑی چیزہوتی ہے۔۔۔
اور میری بیوی آنکھوں میں نمی لے کر ان کو سمجھانے کی کوشش کرتی ہے۔۔۔
بٹیا ایسی بات نہیں ملک کی خدمت کرنے والے کو بڑا رُتبہ ملتاہے۔۔۔
اور ہر روز اسی بحث کے ساتھ وہ بچوں کو سکول چھوڑ کرآتی ہے۔۔۔
میں گھر سے باہرآتا ہوں۔راستے میں موڑسائیکل پنکچر ہوجائے۔۔۔یا لفٹ نہ ملے۔۔۔شدید بارش ہو جائے یا ہڑتال ہو جائے۔۔۔ سردی گرمی۔۔۔ جھاڑا۔۔۔ بخار۔۔۔ بیماری۔۔۔کیمرے میں وقت پر نہ پہنچیں۔۔۔اور بائیومیٹرک پر انگوٹھا نہ رکھیں تو غیر حاضری۔۔۔اور پھرسزا۔۔۔اور سزا سے زیادہ سزا کے دن کا خوف سانس قبض کئے رکھتاہے۔۔۔ گالی گلوچ، دیر سے آنے کے طعنے۔۔۔ دماغ میں سرخ طوفان کے ساتھ۔۔۔ میں۔۔۔ سفید دستانے ۔ ۔ سفید انکلیٹ اور سفیدسیٹی کی ڈوری زیب تن کئے چوک میںکھڑا ہو جاتا ہوں۔۔۔

صبح کے وقت میں سیٹی بجاتا ہوں۔۔۔ہاتھ سے روکتاہوں۔۔۔ پیچھے بھاگتا ہوں مگر کوئی اشارے پہ نہیں رکتا۔۔۔ سبزبتی پر سرخ اشارے کی طرف سے زن کرکے موٹرسائیکل والا گزرتا ہے۔ ۔۔زیبرا کراسنگ ۔۔۔۔ سٹاپ لائن سے بھی چند گز آگے۔۔۔۔۔ریس پر پاﺅں اور ہاتھ۔۔۔۔۔جیسے آگ بجھانے کے لیے جانا ہو۔۔۔۔۔۔ اور لوگ بھاگم بھاگ یہ جاوہ جا۔۔۔۔۔کوئی سینئر آگیا۔۔۔۔۔۔۔ اس نے بے عزتی شروع کردینی ہے ۔۔۔۔۔۔کہ لوگ سگنل کی خلاف ورزی کر رہے ہیں اور تم کھڑے ہو۔۔۔۔۔۔۔۔ کوئی نہیں پوچھے گا کہ خلاف ورزی کرنے والا اندھا ہے۔۔۔۔۔۔ اس کو نظر نہیں آتا۔۔۔۔۔۔

جوں جوں سورج دیوتا سر کی طرف عروج حاصل کرتا جائے گا۔۔۔۔ دھوئیں میں اضافہ ۔۔۔۔۔۔۔۔ منہ اور ناک میں سیاھی کے بادل زیادہ جمع ہونا شروع ہو جائیںگے۔۔۔۔۔۔۔ لوگوں کا پارہ چڑھتا جائے گا۔۔۔ ۔ جس کو روکو وہ بولے گا۔۔۔۔۔۔۔ توں مینوں جاندا نیئں ۔۔۔۔۔۔”
جھٹ سے فون نکالے گا۔۔۔۔ ساتھ ہی دس لوگ کھڑے ہوکر تماشا دیکھنا شروع کر دیں گے۔۔۔۔۔۔ کوئی موبائل سے” سیلفی” لینے کی کوشش کرے گا اور کوئی وڈیو بنانے کی۔۔۔۔۔۔جیسے میں انسانوں کی دنیا میں Alien (خلائی مخلوق) ہوں۔۔۔۔۔کھُسر پھُسر شروع ہوجائے گی۔۔۔۔۔ دور سے ایک ادھ گالی میرے کانوں تک پہنچے گی ۔ ۔۔۔۔۔ کوئی کہے گا©© یہ ہیں ہی” حرام خور”۔۔۔۔۔۔۔۔کہیں سے آواز آئے گی۔۔۔۔۔۔ “سو روپیہ اس کے منہ پر مارو”۔۔۔۔ اس کی اوقات ہی یہی ہے۔۔۔۔۔ کوئی ماں کے نام سے کچھ کہے گا۔۔۔۔۔۔ کچھ بہن کے نام سے۔۔۔۔۔میں۔۔۔۔۔۔ اپنی بے بسی کے ساتھ۔۔۔۔ قانون کا نام روشن کرنے کے لیے ۔۔۔۔۔۔ سب سنوں گا۔۔۔۔ کیونکر میرے جذبات نہیں ۔۔۔۔ احساسات نہیں۔۔۔۔۔ میں مٹی کانہیں پتھر کا انسان ہوں جذبات سے عاری ہوں۔۔۔۔۔ ایک مشین کمپوٹر۔۔۔۔ بے حس یا شایدبے غیرت۔۔۔۔۔۔ مگر میرے سینئر اس کو سیچویشن ہنڈلنگ کہتے ہیں۔۔۔۔۔

بغیر ہیلمٹ، بغیر کاغذ، بغیر لائسنس، بغیر نمبر پلیٹ، بغیربریک اور ہیڈ لائٹ موٹر سائیکل کو روکیں تو بھی کافر ہیں۔۔۔۔ ایک چند سطروں کی درخواست اور میری انکوائری شروع۔۔۔۔۔ میں درخواست کے ساتھ ہی گنہگار تصور کر لیا جاتا ہوں۔۔۔۔۔ اسیلئے انکوائری آفیسر مجھے بیگناہ جانتے ہوئے بھی کہتا ہے۔۔۔۔” معافی مانگ لو۔۔۔۔۔۔ صلح کر لو”۔۔۔۔۔۔۔ کیونکہ میں سرکاری ملازم ہوں۔۔۔۔۔پھر درخواست دھندہ کرسی پر اور میں آفیسر مجاز کے رو برو کھڑا ہوتاہوں۔۔۔۔۔۔ ڈیوٹی کے بعد گھنٹوں انتظار کرتا ہوں۔۔ ۔ ۔ اور پھر” ترلے منتوں “پر آ جاتا ہوں۔۔۔۔
وکیل صاحب ہوں تو وہ لائسنس مانگنے پر بار کاکارڈ دیتے ہیں ۔۔۔۔ سیٹ بیلٹ نہیں۔۔۔۔۔ اوورسپیڈ ہیں۔۔۔۔ اشارہ توڑا ہے۔۔۔۔ بندہ نیچے دے دیا ہے۔ ۔ ۔۔۔ کالے شیشے ہیں۔۔۔۔۔سب کا ایک تریاق ۔۔۔۔۔۔ بار کا کارڈ۔۔۔۔۔

جہاں مرضی اور جب مرضی جو مرضی میرے منہ پر تھپڑ مار دیتاہے ا وروردی پھاردیتے ہیں ۔۔۔۔ میں تھانے جاتا ہوں ۔۔۔۔۔ کہتے ہیں” وکیل کے خلاف درخواست ہے”۔۔۔۔ میرے منہ کی طرف دیکھ کر ہنستے ہیں۔۔۔۔۔ جیسے میں پاگل ہوں۔۔۔۔۔ پھر کہتے ہیں “بھائی وکیل کے خلاف پرچہ ۔۔۔۔۔ نہیں ہوسکتا۔۔۔۔۔ اپنے افسران بالا کے پاس جاتا ہوں۔۔۔۔۔ وہ دیکھتے ہی ڈانٹتے ہیں۔۔۔” تم جہاں جاﺅمسئلہ کھڑا کر لیتے ہو۔۔ ۔۔۔۔ Tactfully ہینڈل کرنا تھا۔۔۔۔۔۔ ہمیشہ ہمارے لئے دردِ سر بناتے ہو۔۔۔۔۔ کئی بار کہا ہے۔۔۔۔۔ وکلاءاور میڈیا کو طریقے سے ہینڈل کر لیا کرو۔۔۔۔ تم لوگوں کا دماغ خراب ہے۔ ۔۔۔ سمجھتے نہیں۔۔۔۔

“میں پھٹی وردی۔۔۔۔۔چہرے کی خراشیں۔۔۔۔۔ سر کے زخم۔۔۔۔۔۔۔ ورق ورق چالان بک دکھاتا ہوں۔۔۔۔۔ مگر ۔۔۔۔ نالہءبے اثر۔۔۔۔۔ اسی دوران چند وکیل۔۔۔ میرے خلاف بدتمیزی کی درخواست لیکر ۔۔۔۔۔۔۔سیاہ کوٹ کی بے حرمتی کا مقدمہ درج کرانے پہنچ جاتے ہیں ۔۔۔۔۔ مقدمہ درج ہو جاتا ہے یا معطل کر دیا جاتا ہوں۔۔۔۔۔ “پھر ترلے، منتیں”۔۔۔۔ معافیاں۔۔۔۔۔ فرائض کی ادائیگی جرم بن جاتی ہیں۔۔۔۔۔۔ اور ساری ایمانداری وکیل صاحب کے قدموں میں ہوا بن کر ناک کے راستے نکل جاتی ہے۔۔۔۔۔۔اگر میں یہاں بھی اپنے قدموں پر قائم رہوں تو یا عدالت بلا کر عدالت کے اندر میری وردی پھاڑتے ہیں اور قانون اندھا ہوتا ہے ۔اس لئے اس کونظر نہیں آتا ۔۔۔۔میں پھٹی وردی ۔۔۔۔بجھے ہوئے چہرے۔۔۔۔۔اور سر سے بہتے ہوئے خون کے ساتھ جب گھر جاتا ہوں ۔۔۔۔تو میری بیوی مجھے دیکھ کر پریشان ہو جاتی ہے ۔۔۔۔بیٹی پوچھتی ہے۔۔۔۔
ماما۔۔۔۔آپ تو کہتی تھیں سرکاری ملازم کی بڑی عزت ہوتی ہے۔۔۔۔

بیٹا پوچھتا ہے ۔۔۔۔
ملک کی خدمت کرنے والے کو بڑا رُتبہ ملتا ہے۔۔۔۔یہی روز کہتی ہیں ناں آپ۔۔۔۔؟
میری بیوی کی آنکھیںجھک جاتی ہیں۔۔۔۔میں بے بس ہو جاتا ہو ں ۔۔۔ اتنا ظاھری چوٹوں سے نہیں مرتا جتنا یہ معصوم لفظ مجھے مارتے ہیں۔۔۔۔
اور وہ خود ہی معصومیت سے جواب دیتے ہیں۔۔۔۔
بابا کیا وطن کی خدمت کرنے والے ۔۔۔۔عوام کی خدمت کرنے والوں کو اسی طرح مار کھانی پڑتی ہے۔۔۔۔ کیاان کے سر پھاڑے جاتے ہیں ۔۔۔۔ان کی وردی پر ایسے ہی ہاتھ ڈالے جاتے ہیں۔۔۔۔
بابا کیا آپ بارڈر پر انڈیا سے جنگ لڑنے گئے تھے ۔۔۔۔۔
یا سڑکوں پر عوام کی زندگی بچانے کے لئے ۔۔۔۔۔!
اور میں ۔۔۔بے بس لا جواب ۔۔۔۔اپنے زخموں کے میڈل اور بیچارگی کے انسو لئے ۔۔۔۔ریت کی بوری کی طرح چار پائی پر ڈھیر ہو جاتا ہوں  مگر کیا کروں ۔۔۔۔

 رکشہ والا، چنگ چی والا، ویگن والا، مزدہ والا، ٹرک والا اور بس والا سب کی ایک ایک انجمن اور اس کے بے شمار رشتہ دار اور عہدے دار۔۔۔۔۔۔ اشارہ توڑیں ۔۔۔۔۔۔ غلط جگہ پارکنگ کریں۔۔۔ جہاں مرضی اڈہ بنالیں۔۔۔۔۔ لائسنس ہے یا نہیں لیکن میںان کو نہیں پوچھ سکتا۔۔۔۔۔ کیونکہ ہڑتال کر دیں گے۔۔۔۔۔ چوک بلاک کردیں گے۔۔۔۔۔ بجلی کے کھمبے پہ چڑھ جائیں گے۔۔۔۔۔۔ اور پھر جو میری شامت آئے گی۔۔۔۔۔۔ ایک اور انکوائری TV پر ایک َٹکر چلے گا۔۔۔۔۔۔۔ میں معطل ۔۔۔۔۔۔۔ “پھر ترلے، منتیں”۔۔۔۔۔۔۔۔ صلح کا بیان۔۔۔۔۔۔ اور پھر میں بے ایمان۔۔ !
ٹریفک میری وجہ سے خراب ہے کیونکہ اس سب کا گنہگار صرف میں ہی ہوں کیونکہ مار کھا کر بھی خاموش رہنا میری مجبوری ہے۔۔۔۔کیونکہ میں سرکار کا آدمی ہوں ۔۔۔۔انکوائری صرف میری ہی ہو سکتی ہے ۔میرے خلاف جھوٹی درخواست دینے والے کی نہیں۔۔۔
جو مرضی مجھ پر ، جب مرضی الزام لگائے ۔۔۔میں گنہگار ہوں اور رہونگا کیونکہ میں نے ایم اے پاس کر کے ۔۔۔۔ معاشرے کو سدھارنے کا بیڑا اُٹھایا تھا ۔۔۔۔ میں بھی گینگ کا حصہ بن جاتا ۔۔۔۔ رشوت لیتا ۔۔۔۔غلط کام دیکھ کر آنکھیں بند کر لیتا تو میں اچھا آدمی ہوتا ۔ مگر کیا کروں میرے خون میں مسئلہ ہے ۔۔۔۔میں غلط کر نہیں سکتا ۔۔۔۔اسلئیے میں گنہگار ہوں ۔۔۔۔کیونکہ میں اندھوں کے شہر میں آئینے بیچ رہا ہوں۔۔۔۔
میں سوچتا ہوں یہ سب کس لئے۔۔۔۔ اگر کسی کو ہیلمٹ پہننے کا کہہ رہا ہوں تو میں کس کی زندگی بچا رہا ہوں۔۔۔۔۔۔؟

اگر سیٹ بیلٹ پہننے کا کہہ رہا ہوں توںکس کی زندگی بچا رہا ہوں۔۔۔۔۔۔؟
ٍٍ اگر لائسنس بنوانے کا کہہ رہا ہوں تو کس کی زندگی بچا رہا ہوں۔۔۔۔۔۔؟
اگرسڑک پر ناجائز پارکنگ نہیں ہونے دے رہا توکس لئے ۔۔۔۔۔؟
اگر اشارہ نہیں توڑنے دے رہا تو کس کے لئے۔۔۔۔؟
اگر ون ویلنگ نہیں کرنے دے رہا تو کس کے لئے۔۔۔۔۔۔؟
شائد سب کچھ اپنی ذات کے لیے۔۔۔۔۔

میں نے ایم اے پاس کیا تھا اور عزت کی نوکری کی تھی اسلیئے — مجھے مارو
میں نے خدمت کے لئے نوکری کی تھی اسلیئے — مجھے مارو
میں نے آپ کو ہیلمٹ پہننے کا کہا اسلیئے — مجھے مارو
میں نے سیٹ بیلٹ باندھنے کا کہا اسلیئے — مجھے مارو
میں نے آپ کو حادثے سے بچایا اسلیئے — مجھے مارو
میں نے آپ کو اشارہ توڑنے سے بچایا اسلیئے — مجھے مارو
میں نے آپ کے بچے کو ون ویلنگ کرنے سے روکا اسلیئے — مجھے مارو
میں نے آپ کی سڑک سے ناجائزپارکنگ ختم کی اسلیئے — مجھے مارو
میں نے تھڑے اور قبضے سڑک سے ختم کئے اسلیئے — مجھے مارو
میں نے آپ کےلئے اپنے بچوں کو چھوڑا اسلیئے — مجھے مارو
میری بیوی کے بالوں میں چاندی اتر آئی میرے انتظار میں اس لیئے — مجھے مارو
میراکینسر زدہ باپ بستر مرگ پر پڑا ہے اور میں ڈیوٹی پر ہوں اسلیئے — مجھے مارو
میری ماں آخری سانس لے رہی ہے اور میں ڈیوٹی پر ہوں اسلیئے — مجھے مارو
میرے گھر میں جنازہ پڑا ہے اور میں ڈیوٹی پر ہوں اسلیئے — مجھے مارو
میرا جوان بچہ ہسپتال میںہے اور میں ڈیوٹی پر ہوں اسلیئے — مجھے مارو
میں گردو غبار اور دھویں سے دمے کا مریض بن گیا ہوں اسلیئے — مجھے مارو
مسلسل کھڑے رہ رہ کر میری کمر میں درد ہے اسلیئے — مجھے مارو
کھانا وقت پر نہ کھانے سے شوگر ہوگئی ہے اسلیئے — مجھے مارو
آپ کی زندگی بچانے کے لئے آ پ سے گالیاں کھاتا ہوں اسلیئے — مجھے مارو
سینئر آفسران اور عوام سے تذلیل کراتا ہوں اسلیئے — مجھے مارو
میرے بچے وقت نہ دینے پر مجھ سے نفرت کرتے ہیں اسلیئے — مجھے مارو
کیونکہ آپ وکیل ہیں اسلیئے — مجھے مارو
کیونکہ آپ کا تعلق میڈیا سے ہے اسلیئے — مجھے مارو
کیونکہ آپ انجمن تاجران کے صدر ہیںاسلئیے — مجھے مارو
کیونکہ آپ سیاسی جماعت کے لاڈلے ہیںاسلیئے — مجھے مارو
میں پاگل آپ کو اور آپ کے بچوں کو مرنے سے بچاتا ہوں اسلیئے — مجھے مارو

مجھے جان سے مارو۔۔۔۔۔۔۔ کیونکہ میں آپ کی جان بچانے کے لئے دہشت گردوں کے نشانے پر ہوں۔۔۔۔۔۔۔ خود کش حملے میں مرتا ہوں۔۔۔۔۔ اپنے بچے خود یتیم کرتا ہوں۔۔۔۔۔ اپنی بیوی کو بیوہ کرتا ہوں۔۔۔۔۔ اپنے ماں باپ اور بہن بھائیوں کو بے اسرا کرتا ہوں اس لئے میری وردی نہ پھاڑو۔۔۔۔ مجھے تھپڑ نہ مارو۔۔۔۔۔ مجھے ڈنڈے سوٹے نہ مارو۔۔۔۔۔۔ بلکہ مجھے جان سے مارو۔۔۔۔
میرے ٹکڑے ٹکڑے کرو۔۔۔۔۔۔ پھر ان کو اکٹھا کرنا ۔۔۔۔۔۔۔پرزہ پرزہ جمع کرنا ۔۔۔۔۔۔ تابوت میں ڈالنا۔۔۔۔۔۔سبز پرچم میں لپیٹنا ۔۔۔۔۔۔ ساری دنیا اور میری ساری نوکری میں مجھے مارنے والو۔۔۔۔۔۔میری عزت نہ کرنے والو ۔۔۔۔مجھے گالیاں سر عام ۔۔۔۔گاڑیوں سے منہ نکال کر دینے والو۔۔۔۔۔ میرے جنازے پر آنا۔۔۔۔۔۔۔پھر بیان دینا ۔۔۔۔۔۔۔ہم شہید کی قربانیوں کو رائیگاں نہیں جانے دیں گے۔۔۔۔۔۔ میرے بچوں کے ساتھ تصویریں بھی بنانا۔۔۔۔۔۔ اور پھر ان کو فیس بک پر لگانا۔۔۔۔۔۔میڈیا پر لگانا۔ ۔ ۔ ۔۔۔ میرے مرنے کے بعد ہر سال پروگرام کرنا۔۔۔۔۔۔۔ مجھے خراجِ تحسین پیش کرنا۔۔ ۔ ۔ ۔ ۔ مگر میری زندگی میں میری قدر نہ کرنا۔۔۔

کیونکہ میری اوقات کیا ہے۔۔۔ صرف ایک چودہ گریڈکا دوٹکے کاوارڈن۔۔۔ جوآپ کو اور آپ کے بچوں کوسڑک پر مرنے سے بچانے کیلئے۔۔۔۔ آپ کی گالیاں کھاتا ہے۔۔۔ مار کھاتا ہے۔۔۔ جوتے کھاتا ہے۔ٹُھڈے کھاتاہے ۔۔۔ ماں بہن کی گالیاں سنتا ہے۔۔۔کس کے لئے؟ آپ کے لیے۔۔۔ جس کی آپ کو ضرورت نہیں۔
اس لئے مجھے مارو نہیں۔۔۔۔بلکہ جان سے مارو۔۔۔۔


کیپٹن(ر) لیاقت علی ملک – پی ایس پی،پی پی ایم
چیف ٹریفک آفیسر، لاہور۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں