The news is by your side.

Advertisement

اعضاء کا عطیہ نہ ملنے سے پاکستان میں ہر تیسرا شخص انتقال کر جاتا ہے، ڈاکٹر ادیب رضوی

کراچی : سربراہ ایس آئی یو ٹی ڈاکٹر ادیب الحسن رضوی نے کہا ہے کہ مِلک میں بعد از مرگ اعضا کے عطیہ کے حوالے سے آگاہی کے فقدان کے باعث پاکستان میں ہر تیسرا شخص انتقال کر جاتا ہے۔

ان خیالات کا اظہار انہوں نے سندھ انسٹیٹوٹ آف یورولوجی میں ایک تقریب سےخطاب کرتے ہوئے کیا، تفصیلات کے مطابق سندھ انسٹیٹوٹ آف یورولوجی میں اعضاء کے عطیہ کے حوالے سے پروگرام کا انعقاد کیا گیا۔

تقریب میں اعضاء کے منتظر مریضوں، ماہرین صحت اور محکمہ صحت سندھ کے نمائندوں نے شرکت کی۔ شرکاء سے خطاب کرتے ہوئے ڈاکٹر اعجاز خان زادہ نے بتایا کہ حکومت سندھ نے صوبے میں سندھ ہیومن آرگن ٹرانسپلانٹ اتھارٹی (ایچ او ٹی اے) بنائی ہے۔

ایچ او ٹی اے نے ہر اسپتال کو پابند کیا ہے کہ برین ڈیتھ ہونے والے مریضوں کے حوالے سے فوری طور پر ہوٹا کو آگاہ کریں۔

اس موقع پر خطاب کرتے ہوئے سربراہ ایس آئی یو ٹی ڈاکٹر ادیب الحسن رضوی کا کہنا تھا کہ مِلک میں بعد از مرگ اعضا کے عطیہ کے حوالے سے آگاہی کے فقدان کے باعث پاکستان میں ہر تیسرا شخص انتقال کر جاتا ہے۔

انہون نے بتایا کہ اب تک بغیر کسی معاوضے کے چھ ہزار سے زائد مریضوں میں اعضاء کی پیوندکاری کی جاچکی ہے، تمام اعضاء کی پیوندکاری دنیا بھر میں ہورہی ہے اور یہ ہم بھی کرسکتے ہیں۔

مزید پڑھیں : جگر کی پیوند کاری سندھ کے اسپتال میں ممکن، بالکل مفت ٹرانسپلانٹ کا کامیاب تجربہ

اس کیلئے صرف لوگوں کی ہمت اور ان میں آگاہی پیدا کی ضرورت ہے، لوگوں کو چاہیے کہ بعد ازمرگ اپنے اعضاء عطیہ کریں کیونکہ ایک فرد آٹھ لوگوں کی زندگیاں بچا سکتا ہے۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں