The news is by your side.

Advertisement

ایران کے لیے جاسوسی کا الزام، سابق اسرائیلی وزیر کے خلاف قانونی کارروائی کا آغاز

تل ابیب: ایران کے لیے جاسوسی کے الزام میں سابق اسرائیلی وزیر برائے توانائی اور انفراسٹکچر کے خلاف قانونی کارروائی کا آغاز کردیا گیا۔

تفصیلات کے مطابق اسرائیلی وزیر برائے توانائی اور انفراسٹکچر پر یہ الزام ہے کہ انہوں نے اپنے دور وزارت میں ایران کے لیے جاسوسی کی تھی اور خفیہ معلومات فراہم کی تھی۔

غیر ملکی خبر رساں ادارے کا کہنا ہے کہ سابق اسرائیلی وزیر ’گونن سیگیو‘ کے خلاف باقاعدہ مقدمے کی سماعت کا آغاز ہوچکا ہے، قبل ازیں اس اہم معاملے کو ملکی سلامتی کی خاطر خفیہ رکھا گیا تھا۔

گونن سیگیو جو 1995ء سے لے کر 1996ء تک توانائی اور انفراسٹکچر کے اسرائیلی وزیر رہے تھے، ان پر عائد کردہ الزامات کے مطابق وہ اسرائیلی ریاست کے خلاف جاسوسی، جنگ کے دور میں دشمن کی مدد کرنے اور ریاستی سلامتی کو نقصان پہنچانے کی نیت سے معلومات کی ترسیل کرتے تھے۔


ایران کےلیےجاسوسی کےالزام میں سابق اسرائیلی وزیرگرفتار


آج ان کے خلاف مقدمے کی پہلی سماعت ہوئی جبکہ مقدمے کی عدالتی سماعت کے آغاز پر صحافیوں کو اس کارروائی سے دور ہی رکھا گیا کیونکہ قومی سلامتی کی وجہ سے یہ سماعت بند کمرے میں ہو رہی ہے۔

دوسری جانب سابق وزیر کے وکیل کا کہنا ہے کہ ان پر محض الزامات عائد کیے جارہے ہیں جس کا حقیقت سے کوئی تعلق نہیں، ان پر جو الزامات عائد کیے جارہے ہیں وہ بہت عمومی اور مجموعی طور پر دانستہ ’غلط تاثر‘ دینے والے ہیں۔


ایران سے تعلقات کا شبہ، سعودی عرب کی عدالت نے 4 افراد کو سزائے موت سنادی


خیال رہے کہ گونن سیگیو کو ماضی میں کریڈٹ کارڈز کے ذریعے فراڈ کی کوششوں کے جرم میں بھی کئی بار سزا سنائی جا چکی ہے۔


خبر کے بارے میں اپنی رائے کا اظہار کمنٹس میں کریں، مذکورہ معلومات کو زیادہ سے زیادہ لوگوں تک پہنچانے کےلیے سوشل میڈیا پرشیئر کریں۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں