The news is by your side.

Advertisement

تیونس میں پُر تشدد مظاہرے، 240 افراد گرفتار

تیونس: تیونس میں مسلسل تیسرے روز بھی پُر تشدد مظاہرے جاری ہیں، پولیس اور مظاہرین کے درمیان ایک جھڑپ کے بعد اب تک 240 افراد کو گرفتار کیا جا چکا ہے۔

شمالی افریقی ملک تیونس کے کم از کم 15 شہروں میں پر تشدد مظاہرے جاری ہیں، پولیس اور مظاہرین کے مابین مسلسل تیسرے دن بھی جھڑپ کی اطلاعات ہیں، یہ مظاہرے ملک کو درپیش معاشی بحران کے خلاف کیے جا رہے ہیں۔

حکام کا کہنا ہے کہ پولیس سے جھڑپوں اور پُر تشدد مظاہروں میں گرفتار افراد میں زیادہ تر کی عمر 20 برس سے کم ہے۔ گرفتار لڑکوں اور کم سن بچوں نے لوگوں کی املاک کو توڑ پھوڑ کے ذریعے نقصان پہنچایا، دکانوں اور بینکوں کو لوٹنے کی کوشش کی۔

واضح رہے کہ تیونس میں غربت، بدعنوانی اور بے انصافی عروج پر ہے، ملک کی قومی معیشت بہت زیادہ خراب ہو چکی ہے۔

مظاہرین نے اس تازہ احتجاج کے دوران میں ابھی تک کوئی واضح مطالبات پیش نہیں کیے ہیں، تیونس حکام نے انھیں بلوائی قرار دیا، پولیس نے مظاہرین کو منتشر کرنے کے لیے گیس کے گولے بھی پھینکے۔

وزارت داخلہ کے مطابق مظاہرین نے ٹائر جلا کر سڑکیں بند کیں، مظاہرین کی جانب سے پولیس، کاروباری اداروں پر پتھراؤ کیا گیا۔ وزارت دفاع کے ترجمان کے مطابق نجی اور سرکاری املاک کے تحفظ کے لیے فوج کو کچھ علاقوں میں تعینات کر دیا گیا ہے۔

Comments

یہ بھی پڑھیں