The news is by your side.

Advertisement

جرمن فٹبالرز کو طیب اردگان کے ساتھ تصاویر بنوانا مہنگا پڑگیا

برسلز : جرمنی کے قومی فٹبالر اوزیل اور گوندوگان کی طیب اردوگان سے ملاقات اور اپنی شرٹ پیش کرنے پر سیاسی حلقوں کی جانب سے دونوں کھلاڑیوں کو تنقید کا نشانہ بنایا جارہا ہے.

تفصیلات کے مطابق جرمنی کی فٹبال فیڈریشن نے اپنے قومی کھلاڑیوں میسوٹ اوزیل اور ایلکے گوندوگان کو ترک صدر طیب اردوگان کے ساتھ تصاویر بنوانے پر تنقید کا نشانہ بنایا جارہا ہے۔

غیر ملکی خبر رساں ادارے کا کہنا تھا کہ دو ترک نژاد جرمن فٹبالر نے اتوار کے روز برطانیہ کے دارالحکومت لندن میں دوران تقریب ترکی کے صدر طیب اردوگان کو اپنی دستخط کی ہوئی شرٹ پیش کی۔

غیر ملکی خبر رساں ادارے کا کہنا تھا کہ فٹبالر ایلکے گوندوگان نے لکھا تھا کہ ’میں اپنے معزز صدر کا بہت احترام کرتا ہوں‘، طیب اردوگان اس وقت دوبارہ الیکشن کروانے کی مہم چلا رہے ہیں۔

خیال رہے کہ میسوٹ اوزیل آرسنل کلب کے لیے فٹبال کھیلتے ہیں جبکہ گوندوگان مینچیسٹر کے کھلاڑی ہیں۔

غیر ملکی میڈیا کا کہنا ہے کہ جرمنی کے اکثر سیاست دانوں کی جانب سے دونوں فٹبالر پر کڑی تنقید کی جاری ہے اور ملک کے لیے ان کی وفاداری پر بھی سوالات اٹھ رہے ہیں۔

جرمنی کے فٹبال کلب ڈی ایف بی کے صدر رین ہارڈ گرینڈل کا کہنا تھا کہ ’فٹبال اور ڈی ایف بی جن اقدار کی عزت کرتے ہیں ترک صدر طیب اردوگان کی نظر میں ان اقدار کی اتنی اہمیت نہیں ہے‘۔

ڈی ایف بی کے صدر کا کہنا تھا کہ ’لہذا یہ اچھا نہیں ہے کہ ہمارے بین الاقوامی کھلاڑی اپنے آپ کو طیب اردوگان کی انتخابی مہم سے جوڑیں، دونوں کھلاڑیوں کے ایسے اقدامات کرنے سے ڈی ایف بی کی کوئی مدد نہیں ہورہی ہے‘۔


خبر کے بارے میں اپنی رائے کا اظہار کمنٹس میں کریں، مذکورہ معلومات کو زیادہ سے زیادہ لوگوں تک پہنچانے کےلیے سوشل میڈیا پرشیئر کریں۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں