The news is by your side.

Advertisement

ہلدی ملا دودھ متعدد موذی امراض سے تحفظ میں معاون

ہلدی اپنے اندر جادوئی خواص رکھنے والا مصالحہ ہے اور اس کا باقاعدہ استعمال نہایت حیرت انگیز نتائج دے سکتا ہے لیکن اگر ہلدی کو دودھ میں ملا دیا جائے تو اس کے طبی فوائد بھی دگنے ہوجاتے ہیں۔

ایک چمچہ ہلدی میں 24 کیلوریز، چکنائی، فائبراور پروٹین پایا جاتا ہے۔ اس میں معدنیات اور فولاد بھی پائی جاتی ہے اور یہ طاقتور اینٹی آکسیڈنٹس سے بھرپور ہے۔

ہلدی ملے دودھ کا استعمال تو صدیوں سے برصغیر میں ہورہا ہے اور اب مغربی ممالک میں بھی اسے مقبولیت حاصل ہورہی ہے۔

آئیے ہلدی ملے دودھ کے فوائد سے اپنے قارئین کو آگاہ کرتے ہیں۔

ورم اور جوڑوں کی تکلیف میں کمی

دودھ میں ہلدی شامل کرنے سے زرد رنگ کا مشروب بنتا ہے جو ورم کش اجزا پر مشتمل ہوتا ہے اور دائمی ورم دائمی امراض بشمول کینسر، میٹابولک سینڈروم، الزائمر اور امراض قلب میں بنیادی کردار ادا کرتا ہے۔

تحقیق سے ثابت ہوا ہے کہ ادرک، چینی اور ہلدی ورم کش خصوصیات سے لیس ہوتے ہیں، جس سے جوڑوں کی تکلیف میں کمی آنے کا امکان ہوتا ہے۔

بلڈ شوگر کی سطح میں کمی

ہلدی ملے دودھ میں اگر دار چینی اور ادرک بھی ملا دی جائے تو یہ مشروب بلند فشار خون کو کنٹرول کرنے میں انتہائی مفید ثابت ہوتا ہے۔

اس حوالے سے مزید تحقیق کی ضرورت ہے مگر ہلدی دودھ کے استعمال میں کوئی نقصان بھی نہیں۔

کیلشیئم اور وٹامن ہڈیاں مضبوط بنائے

اگر غذا میں کیلشیئم کی مقدار کم ہو تو ہڈیاں کمزور اور بھربھری ہوجاتی ہیں جس سے ہڈیوں کے امراض کا خطرہ بڑھتا ہے۔

ہلدی ملا دودھ ہڈیوں کو مضبوط بنانے میں بھی مددگار ثابت ہوسکتا ہے، گائے کا دودھ کیلشیئم اور وٹامن ڈی سے بھرپور ہوتا ہے اور یہ دونوں ہی ہڈیوں کو مضبوط بنانے میں اہم کردار ادا کرتے ہیں۔

مذکورہ بالا مسائل کے علاوہ ہلدی ملا دودھ اینٹی بیکٹریل، اینٹی وائرل اور اینٹی فنگل خصوصیات کا حامل ہوتا ہے اور نظام ہاضمہ بہتر بنانے، کینسر کے خطرے میں ممکنہ کمی، امراض قلب سے ممکنہ تحفظ، یادداشت اور دماغی افعال میں ممکنہ بہتری اور مزاج کو خوشگوار بنانے میں کافی فائدے مند ثابت ہوتا ہے۔

Comments

یہ بھی پڑھیں