The news is by your side.

Advertisement

ٹوئٹر نے 10 لاکھ سے زائد اکاؤنٹس بند کردیے

کیلی فورنیا: مائیکروبلاگنگ اور سماجی رابطے کی ویب سائٹ ٹوئٹر نے اعلان کیا ہے کہ اُس نے دہشت گردی کی ترغیب دینے یا اُس کی ترویج کرنے والے دس لاکھ سے زائد صارفین کے اکاؤنٹس بند کردیے۔

تفصیلات کے مطابق سماجی رابطے کی ویب سائٹ ٹوئٹر نے گذشتہ برس اعلان کیا تھا کہ انتظامیہ تشدد پر اکسانے یا پھر دوسرے صارف کو ہراساں کرنے والے اکاؤنٹس کے خلاف سخت ایکشن لینے کا ارادہ رکھتی ہے۔

ٹوئٹر انتظامیہ کی جانب سے جاری اعلامیے کے مطابق ’ہم نے اپنے پلیٹ فارم کی شفافیت کو برقرار رکھنے کے لیے اب تک 10 لاکھ سے زائد ایسے صارفین کے اکاؤنٹس بلاک کیے جو دہشت گردی کی ترغیب دیتے یا پھر اس طرف اکساتے تھے۔

مائیکروبلاگنگ نے اس ضمن میں ایک رپورٹ جاری کی جس میں کہا گیا ہے کہ گزشتہ برس جولائی سے دسمبر تک 2لاکھ 74 ہزار اور 460 ایسے اکاؤنٹس کو نشاندہی کے بعد بند کیا گیا جو دہشت گردی کو فروغ دے رہے تھے۔

ٹونٹر انتظامیہ کا کہنا ہے کہ ہم صارفین کو مثبت پلیٹ فارم فراہم کرنے کے لیے اس پالیسی پر گامزن ہیں جس کے لیے باقاعدہ مانیٹرنگ ٹیم بھی ترتیب دی گئی ہے جو خاص طور پر اکاؤنٹس پر نظر رکھتی ہے۔

دہشت گردی کے خلاف نبرآزما ممالک نے ٹویٹر انتظامیہ پر زور دیا تھا کہ وہ اپنے پلیٹ فارم پر دہشت گردوں کی ترویج کو ہرصورت روکیں کیونکہ اس اقدام سے انسداد دہشت گردی کے خلاف جنگ کے مثبت نتائج سامنے نہیں آرہے۔

ٹوئٹر رپورٹ کے مطابق گذشتہ 6 ماہ کے دوران رپورٹ کیے جانے والے 93 فیصد اکاؤنٹس عالمی قوانین کے تحت بند کردیے گئے جبکہ 74 فیصد کو پہلے ہی ٹوئٹ پر بند کیا گیا۔

انتظامیہ کا مزید کہنا ہے کہ گذشتہ 6 ماہ کے دوران ہر قسم کے اقدامات کے باوجود سرکاری رپورٹ میں اس بات کا انکشاف کیا گیا کہ ابھی بھی 0.2 فیصد اکاؤنٹس شدت پسندی پر لوگوں کو اُکسا رہے ہیں۔ ٹوئٹر کا مزید کہنا ہے کہ کسی بھی صارف کا اکاؤنٹ بند ہونا آزادی اظہار رائے کی پابندی نہیں بلکہ یہ اقدام دہشت گردی کی روک تھام کے لیے کیا جارہا ہے۔


خبر کے بارے میں اپنی رائے کا اظہار کمنٹس میں کریں‘ مذکورہ معلومات کو زیادہ سے زیادہ لوگوں تک پہنچانے کے لیے سوشل میڈیا پرشیئر کریں۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں