’اوپن ہارٹ سرجری ہونی تھی، پر یہ تو ہومیو پیتھک نکل آیا‘ -
The news is by your side.

Advertisement

’اوپن ہارٹ سرجری ہونی تھی، پر یہ تو ہومیو پیتھک نکل آیا‘

پاناما کیس کا تاریخی فیصلہ آتے ہی سوشل میڈیا پر مختلف آرا و تبصروں کا سلسلہ شروع ہوگیا۔ فیصلے سے عوام کی بڑی تعداد شدید مایوسی کا شکار ہوگئی جو آج وزیر اعظم نواز شریف کے گھر جانے کی توقع کر رہی تھی۔

سماجی رابطوں کی ویب سائٹ ٹوئٹر پر لوگوں نے مختلف تبصرے کیا۔ یہ تبصرے زیادہ تر مایوسانہ اور شکایتی تھے۔

ایک صارف نے لکھا، ’آج ہم نے فیصلہ کرلیا ہے کہ ہم کرپشن کے ساتھ جیئیں گے‘۔

کسی نے اسے ناکام ریاست کا ناکام نظام انصاف قرار دیا۔

ایک خاتون نے کہا کہ ’پاناما کیس صرف ٹوپی ڈرامہ تھا۔ دونوں پارٹیاں ایک جیسی ہیں۔ ایک نے کرپشن کی، دوسری اپنی باری کا انتظار کر رہی ہے۔ بیچارے ججز اور بیچاری سپریم کورٹ‘۔

ایک صارف کا کہنا تھا، ’تمام منی لانڈرز، کرپٹ لوگوں اور مافیاؤں کو مبارک ہو‘۔

ایک شخص نے صورتحال کا یہ تجزیہ پیش کیا، ’جو لوگ پاناما کیس سے کمارہے تھے یہ ان لوگوں کی جیت ہے۔ جیسے دھرنا کروانے والے، ٹی وی چینلوں کے اینکرز، پینا فلیکس پوسٹر بنانے والے۔‘


ایک صارف نے کہا، ’ہمارے بچے مستقبل میں کہیں گے، چلو جوڈیشری کا کھیل کھیلتے ہیں‘۔

کسی نے کہا، ’میں انتظار کر رہا ہوں کہ کوئی کہے، وہ رہا کیمرا اور یہ سب ایک مذاق (پرینک) تھا‘۔


ایک صارف نے کچھ یوں اپنے تاثرات کا اظہار کیا، ’لوگ توقع کر رہے تھے کہ یہ اوپن ہارٹ سرجری نما کوئی فیصلہ ہوگا مگر یہ تو ہومیو پیتھک نکل آیا‘۔

ایک شخص نے وزیر اعظم کے ممکنہ تاثرات کی کچھ اس طرح تشریح کی۔

ایک دل جلے نے تبصرہ کیا، ’پیارے پاکستانیوں! پلیز انجوائے کریں۔ ہم اسی کے قابل ہیں‘۔


اگر آپ کو یہ خبر پسند نہیں آئی تو برائے مہربانی نیچے کمنٹس میں اپنی رائے کا اظہار کریں اور اگر آپ کو یہ مضمون پسند آیا ہے تو اسے اپنی فیس بک وال پر شیئر کریں۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں