The news is by your side.

Advertisement

امریکا نے ایران پر ایک مرتبہ پھر اقتصادی پابندیاں عائد کردیں

تہران/واشنگٹن : امریکی حکام نے جوہری معاہدہ ختم کرنے کے بعد ایران کے ملت اور مہر بینک سمیت کئی کمپنیوں پر نئی اقتصادی پابندیاں عائد کردی ہیں۔

تفصیلات کے مطابق امریکی حکومت کی جانب سے رواں برس جوہری معاہدے سے نکلنے کے بعد ایک مرتبہ پھر ایران پر اقتصاد پابندیاں عائد کردی ہیں جن اداروں پر پابندیاں لگائی گئی ہیں ان میں ایران کا مہر اور ملت بینک بھی شامل ہے۔

غیر ملکی خبر رساں ادارے کا کہنا تھا کہ ایران کی ٹریکٹر ساز کمپنی، سپاہ پاسداران کی مالی معاونت کرنے والا بڑا مالیاتی ادارہ اور ایک بینک کو ایرانی پابندیوں کا سامنا کرنا پڑے گا۔

غیر ملکی میڈیا کا کہنا تھا کہ مالیاتی ادارے پر ایرانی سپاہ پاسداران کے پیراملٹری گروپ کی معاونت کا الزام عائد کیا ہے، جو کم عمر بچوں کو فوجی تربیت فراہم کرتے ہیں۔

غیر ملکی خبر رساں ادارے کا کہنا تھا کہ امریکا نے ایران کے ملت بینک پر بسیج فورس کے مہر بینک سے تعاون کرنے کا الزام عائد کرکے قدغنیں لگائی ہیں جبکہ مہر اقتصاد بینک کے زیر انتظام کام کرنے والی کمپنیوں پر پابندیوں کا سامنا کرنا پڑے گا۔

خیال رہے کہ امریکا کی جانب سے ایران پر اقتصادی پابندیاں عائد کرنے کے بعد رواں سال جون میں عالمی طیارہ ساز کمپنی نے بھی ایران کو جہاز کی فروخت روک دی تھی۔

امریکا نے عالمی جوہری معاہدے سے دست برداری کے بعد ایران پر اقتصادی پابندیاں عائد کردی ہیں جس کے باعث امریکی ڈالر کے مقابلے میں ایرانی ریال کی قدر میں ریکارڈ کمی دیکھنے میں آئی۔

واضح رہے کہ امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے ایران سے جوہری معاہدہ ختم کرنے کے بعد اس ملک پر ماضی میں لگائی جانے والی اقتصادی پابندیاں دوبارہ بحال کردی ہیں۔

یاد رہے کہ امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے رواں سال مئی میں ایران سے جوہری معاہدہ ختم کرنے کا اعلان کرتے ہوئے کہا تھا کہ ایران پر سخت پابندیاں لگائیں گے، ایران سے جوہری تعاون کرنے والی ریاست پر بھی پابندیاں لگائیں گے۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں