دبئی: پولیس افسر کی رحم دلی، ماں کو شیر خوار بچے سے جدا ہونے سے بچالیا humanitarian case
The news is by your side.

Advertisement

پولیس افسر کی رحم دلی، ماں اور شیر خوار بچے کو بچھڑنے نہ دیا

ابو ظہبی : متحدہ عرب امارات کی ریاست دبئی کے پولیس افسر نے سات ماہ کے بچے کی والدہ کو چیک باؤنس کیس میں جیل جانے سے بچانے کے لیے اپنی جیب سے 10 ہزار درہم جرمانے کی رقم ادا کردی۔

تفصیلات کے مطابق متحدہ عرب امارات کے انسانیت کی خدمت کرنے کے جذبے سے سرشار ایک پولیس آفیسر نے سات ماہ کے شیر خوار بچے کی والدہ کو اپنی جیب 10 ہزار درہم جرمانے کی رقم ادا کرکے چیک باؤنس کیس میں جیل جانے سے بچالیا۔

غیر ملکی خبر رساں ادارے کا کہنا تھا کہ دبئی کی عدالت نے شیر خوار بچے کی والدہ کو چیک باؤنس ہونے کے مقدمے میں تین ماہ 10 دن قید کی سزا سناتے ہوئے جیل منتقل کرنے کا حکم دیا تھا تاہم اگر مذکورہ خاتون جیل جانے سے بچنا چاہتی ہے تو اسے 10 ہزار درہم جرمانا ادا کرنے کا حکم دیا گیا تھا۔

عرب میڈیا کے مطابق خاتون کو شیر خوار بچے سے جدا ہونے سے بچانے والے دبئی پولیس کے لیفٹیننٹ عبد الہادی الحمادی کا کہنا تھا کہ ’میں نے اپنی آنکھوں سے خاتون کے شوہر کو آہ و بکا کرتے دیکھا تھا جو کہہ رہا تھا کہ اگر میری اہلیہ جیل چلی گئی تو میرے شیر خوار بچے کا کیا ہوگا‘۔

لیفٹیننٹ عبد الہادی الحمادی کا کہنا تھا کہ ’میرے دل میں خیال آیا کہ خاتون کو قید ہوئی تو بچے کی دیکھ بھال کون کرے گا‘۔

عرب میڈیا کا کہنا تھا کہ خاتون مالی مسائل کا شکار تھی جس کے باعث اس نے اپنے شوہر کی کمپنی کی جانب سے ایک چیک پر دستخط کردیئے تھے لیکن بینک اکاؤنٹ میں رقم نہ ہونے کی وجہ سے خاتون کا چیک باؤنس ہوگیا اور اسے مقدمے کا سامنا کرنا پڑا۔

لیفٹیننٹ عبدالہادی کا کہنا تھا کہ مجھے پولیس میں عوام کی مدد کرنا اور ان کی مشکات کو حل کرنے کے لیے ذمہ دی گئی ہے اس لیے میں مذکوری خاتون کی مدد کی اور چاہتا تھا کہ میری نیکی کے بارے میں کسی کو علم نہ ہو پھر نہ جانے کیسے میڈیا تک بات پہنچ گئی۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں