The news is by your side.

Advertisement

بھارت میں جمہوریت خوف بن گئی ہے، برطانوی حکومت مودی پر مسلمانوں پر مظالم رکوانے کیلئے دباؤ ڈالے،برطانوی اخبار

لندن : بھارت میں مسلمانوں پر بڑھتے مظالم، برطانوی میڈیا میں بھی آوازیں اٹھنے لگیں، برطانوی اخبار میں شائع ہونے والے آرٹیکل میں مطالبہ کیا گیا ہے کہ بھارت میں جمہوریت خوف بن گئی، برطانوی حکومت مسلمانوں پر مظالم رکوانے کیلئے مودی پر  دباؤ ڈالے ۔

تفصیلات کے مطابق بھارت میں مسلمانوں پرانتہاپسند ہندوؤں کے مظالم پرعالمی میڈیا بھی بول اٹھا، برطانوی اخبار میں شائع ہونے والے مضمون میں کہا گیا ہے کہ مقبوضہ کشمیرمیں ہندوانتہا پسندوں نے مندر میں آٹھ سالہ مسلمان بچی کوزیادتی کا نشانہ بنا کر قتل کردیا گیا، بی جےپی انتہاپسندہندوؤں کیخلاف کارروائی نہیں کرتی بلکہ حکمران جماعت بی جے پی کے وزیر قاتلوں کو بچانے کے لئے مہم چلارہے ہیں۔

آرٹیکل میں کہنا ہے ہندوانتہا پسندوں کا ہجوم گائے کا گوشت کے بہانے مسلمانوں کوقتل کرتا ہے، 15سال کےمسلمان لڑکےکوچلتی ٹرین میں ہجوم نے قتل کیا لیکن مودی سرکار نے کوئی کارروائی نہیں کرتی۔

مضمون میں مطالبہ کیا گیا ہے کہ برطانوی حکومت مودی پرمظالم رکوانے کیلئے دباؤڈالے۔

برطانوی اخبار کے مطابق بھارت میں جمہوریت خوف بن گئی ہے ان واقعات سے ظاہرہے کہ مسلمانوں کا قتل عام منصوبہ بندی کے تحت کیا جا رہا ہے تاکہ بھارت کی ہندواسٹیٹ بننے کی راہ ہموارہوسکے۔


مزید پڑھیں : لندن: نریندر مودی کی آمد پر کشمیریوں کا برطانوی پارلیمنٹ کے باہر احتجاج


گذشتہ روز بھارتی وزیر اعظم نریندر مودی کی لندن آمد کے موقع پر کشمیریوں نے کشمیر میں بھارتی فوج کی جارحیت اور ننھی آصفہ کے قاتلوں کی گرفتاری کے لیے برطانوی پارلیمنٹ کے باہر احتجاجی مظاہرے کیے، مشتعل مظاہرین نے بھارتی پرچم پھاڑ ڈالا۔

مظاہرین نے نریندر مودی اور کشمیریوں کےقتل کیخلاف بینرز اٹھارکھے تھے اور کشمیراورخالصتان کی آزادی کے حق میں نعرے بازی بھی کی۔

آزادکشمیر کی قیادت، برطانوی ارکان پارلیمنٹ اور سیاسی وسماجی رہنماؤں نےتاریخی احتجاج کےدوران میڈیا سے گفتگومیں عالمی برادری سے مسئلہ کشمیر حل کرانے کا مطالبہ کیا۔

احتجاجی مظاہرہ برطانیہ کی سکھ برادری اور کشمیری کمیونٹی کی جانب سے کیا گیا۔

واضح رہے کہ رواں ماہ کے آغاز میں ہی بھارتی فوج کی جانب سے مقبوضہ کشمیر کے علاقے شوپیاں میں 17 سے زائد نوجوانوں کو شہید کیا گیا تھا جس کے بعد وادی میں ہنگامے پھوٹ پڑے تھے۔

خیال رہے کہ رواں برس جنوری میں مقبوضہ کشمیر میں ایک 8 سالہ ننھی بچی آصفہ بانو کو زیادتی کے بعد قتل کردیا گیا تھا، آصفہ بانو کے قاتلوں کی گرفتاری کے لیے مقبوضہ کشمیر اور بھارت میں احتجاجی مظاہرے کئے گئے تھے۔


خبر کے بارے میں اپنی رائے کا اظہار کمنٹس میں کریں، مذکورہ معلومات کو زیادہ سے زیادہ لوگوں تک پہنچانے کے لیے سوشل میڈیا پر شیئر کریں

 

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں