برطانیہ کشمیر میں بھارتی تشدد رکوانے کے لیے تیار ہے: پاکستانی ہائی کمشنر -
The news is by your side.

Advertisement

برطانیہ کشمیر میں بھارتی تشدد رکوانے کے لیے تیار ہے: پاکستانی ہائی کمشنر

لندن: برطانیہ میں مقیم پاکستانی ہائی کمشنر سید ابن عباس کا کہنا ہے کہ مسئلہ کشمیر کی باز گشت اب برطانوی پارلیمنٹ اور حکومتی ایوانوں میں بھی سنی جارہی ہے ‘کشمیر میں انسانی حقوق کی پامالی اور ہزروں ہلاکتوں اور عالی سطح پر ہونے والیا حتجاج کو دیکھتے ہوئے برطانوی ارباب اختیار سمجھتے ہیں انھیں تنازعہ کشمیر کے حل میں کردارا دا کرنا چاہئے۔

اے آروائی نیوز کے نمائندے محمد صلاح الدین سے لندن میں پاکستانی ہائی کمیشن میں ملاقات کے دوران گفتگو کرتے ہوئے ابن عباس کا کہنا تھا کہ یورپی یونین کو خیرباد کہنے کے بعد برطانیہ کو نئی تجارتی منڈیوں کی تلاش ہے اوراس کی جانب سے سی پیک منصوبے میں زبردست دلچسپی کے اشارے ملے ہیں جبکہ برطانیہ مقبوضہ کشمیر میں انسانی حقوق کی خلاف ورزیاں رْکوانے میں کردار ادا کرنے کیلئے بھی تیار ہے۔

ابن عباس کا کہنا تھا کہ یورپی یونین کو خیر باد کہنے کے بعد برطانیہ کو اپنے ملک میں نئے لوگوں کی آمد اور نئی منڈیوں کی تلاش ہے ، پاکستانی اس سے فائدہ اٹھائیں۔دونوں ممالک میں تجارتی حجم تین ارب پاونڈ ہوگیا ہے اور اگلا ہدف اسے چار ارب پاونڈ تک لے جانا ہے۔انھوں نے بتایا کہ پاک چائنہ اکنامک کوریڈور کے بارے میں برطانیہ کوبے پناہ دلچسپی ہے۔

پاکستانی اور برطانوی وزراء اعظم نے باہمی تجارت تین ارب پونڈ تک پہنچانے کا عزم کیا تھا ، ہم اس ہدف کے قریب پہنچ گئے ہیں 2019 تک پاکستان اور برطانیہ کا تجارتی حجم چار ارب پونڈ ہو جائے گا ۔

یورپی یونین سے نکلنے کے فیصلے کے بعد پاکستان برطانیہ سے نئے تجارتی معاہدے پی ٹی اے کیلئے کوشیش کررہا ہے‘ یورپی یونین کے بعد برطانیہ نئی تجارتی منڈیوں کی تلاش میں ہے پاکستان کیلئے برطانیہ میں تجارتی مواقع میں اضافہ ہوا ہے۔

دولت مشترکہ کے رکن کی حیثیت سے برطانیہ اور پاکستان کے درمیان اعتماد کا رشتہ ہے برطانوی حکومت نے پاکستان کیلئے ایکسپورٹ فنڈ دو سو ملین پونڈ سے بڑھا کر تین سو ملین پونڈ کردیا ہے ‘ایکسپورٹ فنڈ میں اضافے سے برطانیہ میں مقیم پاکستانی فائدہ اٹھا سکتے ہیں۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں