The news is by your side.

Advertisement

یوکرینی صدر کو قتل کرنے کا کوئی ارادہ نہیں، روس

ماسکو : کریملن کے پریس سیکرٹری دیمتری پیسکوف نے کہا ہے کہ روس کا یوکرین کے صدر ولادیمیر زیلنسکی کو قتل کرنے یا انہیں اقتدار سے ہٹانے کا کوئی منصوبہ نہیں ہے۔

فرانسیسی نشریاتی ادارے ایل سی آئی کو انٹرویو کے دوران جب ان سے ان قیاس آرائیوں پر تبصرہ کرنے کے لیے کہا گیا کہ کیا ماسکو زیلنسکی کو قتل کرنا چاہتا ہے؟

جس کے جواب میں ان کا کہنا تھا نہیں یہ سچ نہیں ہے، پیسکوف نے یہ بھی وضاحت کی کہ پڑوسی ملک میں حکومت کی تبدیلی روس کے جاری فوجی آپریشن کے مقاصد میں شامل نہیں ہے۔

روسی صدارتی ترجمان نے کہا کہ زیلنسکی یوکرین کے صدر ہیں اور ماسکو ان سے ان مطالبات کو منوانا چاہتا ہے جو روسی وفد نے امن مذاکرات کے دوران پیش کیے ہیں۔

پیسکوف نے کہا کہ بات چیت کے ذریعے ہم فوجی آپریشن کو ختم کرنا چاہتے ہیں، انہوں نے مزید کہا کہ یوکرائنی دارالحکومت کیف کے قریب کے علاقوں سے اپنی فوجوں کو واپس بلانے کا ماسکو کا حالیہ فیصلہ ان کے مثبت نتائج کو آسان بنانے کے لیے نیک خواہشات کا اظہار تھا۔

ماسکو اور کیف کے وفود کے درمیان آمنے سامنے مذاکرات کا حالیہ دور ایک ہفتہ قبل ترکی کے شہر استنبول میں ہوا۔

ماسکو نے فروری کے آخر میں اپنے پڑوسی میں فوجی آپریشن شروع کیا، یوکرین کی جانب سے 2014 کے مینسک معاہدوں کی شرائط پر عمل درآمد میں ناکامی، اور روس کی جانب سے دونیسک اور لوگانسک میں دونباس جمہوریہ کو حتمی طور پر تسلیم کرنے کے بعد یہ فوجی مہم شروع ہوئی۔

Comments

یہ بھی پڑھیں