اترپردیش میں مسلمانوں کے کھلے مقامات پر قربانی کرنے پر پابندی
The news is by your side.

Advertisement

عیدالاضحی : اترپردیش میں مسلمانوں کے کھلے مقامات پر قربانی کرنے پر پابندی

اترپردیش : عیدالاضحی پر بھی بھارت میں مسلمان دشمن بازنہ آئے، اترپردیش میں مسلمانوں کے گائے قربان کرنے اور کھلے مقامات پر قربانی کرنے پر پابندی لگادی گئی۔

بھارتی میڈیا کے مطابق مودی سرکار کے ہندو انتہاء پسند وزیر اعلیٰ ادیتیہ یوگی ناتھ کی جانب سے مسلم دشمن احکامات جاری کردیے گئے، جس میں عیدالاضحی موقع پر مسلمانوں کے کھلے مقامات پر قربانی کرنے پر پابندی لگادی گئی۔

وزیر اعلیٰ ادیتیہ یوگی ناتھ نے مسلمانوں کے گائے قربان کرنے پر بھی پابندی لگادی اور واضح کہا کہ ممنوعہ جانوروں کی قربانی قطعی برداشت نہیں کی جائے گی اور ایسا کرنے والے کے خلاف سخت کارروائی ہوگی۔

وزیر اعلیٰ ادیتیہ یوگی ناتھ نےعیدالاضحی سے قبل کی تیاریوں کا جائزہ لیتے ہوئے انتظامیہ اور پولیس حکام کو ہدایت کی کہ تہوار پر روایت کے خلاف کچھ بھی نہیں ہونا چاہیے، اگر پالیسیوں کے خلاف کوئی کام کرتا ہوا پایا گیا تو اس کے خلاف سخت کارروائی کی جائے گی اور اعلی حکام کو اس کا جواب دینا ہوگا۔

یاد رہے گذشتہ سال ہندو انتہاء پسند وزیر اعلیٰ اترپردیش ادیتیہ یوگی ناتھ نے اپنی نامزدگی کے بعد ریاست میں ہرقسم کگوشت کی فروخت پر پابندی کا اعلان کیا تھا۔

اعلان کے بعد بھارتی ریاست اترپردیش میں مذبحہ خانوں کے خلاف کارروائی عمل میں لائی گئی تھی اور گائے کا گوشت فروخت کرنے والوں کو سزا دی گئی تھی جس کے بعد وہاں گائے کے گوشت کی فروخت مکمل بند ہوگئی تھی مگر مٹن اور چکن کا گوشت بدستور فروخت کیا جارہا تھا۔

خیال رہے بھارتیہ جنتا پارٹی کی حکومت آنے کے بعد ہندو انتہاء پسند بے قابو ہوگئے ہیں اور آئے روز کسی گائے کا گوشت رکھنے کا الزام لگا کر کسی بھی مسلمان کو شدید تشدد کا نشانہ بنا ڈالتے ہیں۔

واضح رہے کہ نریندر مودی نے وزیراعظم بننے سے قبل اپنی انتخابی مہم میں یہ اعلان کیا تھاکہ وہ وزارت عظمیٰ کامنصب سنبھالنے کے بعد گائے کو مقدس قرار دیتے ہوئے اس کے ذبیحہ پر مکمل پابندی عائد کردیں گے

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں