The news is by your side.

Advertisement

باصلاحیت ہونے سے کوئی فرق نہیں پڑتا!

ایک نوجوان امریکی، جون کینیڈی ٹول نے A Confederacy of Dunces کے نام سے ناول لکھا۔ اس کا خیال تھا کہ وہ ایک بہت اچھا ناول لکھنے میں کام یاب ہو گیا ہے۔ اس نے چار پانچ بڑے ناشروں سے رجوع کیا۔ ہر جگہ اس کے ناول کو مسترد کر دیا گیا۔ بددل ہو کر اس نے خودکشی کر لی۔

اس کی ماں کو بہت صدمہ پہنچا۔ اتفاق سے برس ہا برس بعد کسی محفل میں اس کی ملاقات معروف ادیب واکر پرسی سے ہوئی۔ ماں نے شکوہ کیا کہ ناشر بڑے ادب ناشناس اور بے لحاظ ہیں۔ میرے بیٹے نے بڑا اچھا ناول لکھا تھا۔ ہر جگہ اس کے ناول کو مسترد کر دیا گیا۔ ناکامی کی تاب نہ لا کر اس نے خودکشی کر لی۔

واکر پرسی نے یہ سن کر، دل رکھنے کے لیے، کہا کہ مسودہ مجھے بھجوا دیں۔ میں پڑھ کر دیکھتا ہوں۔ جب واکر پرسی نے مسودہ پڑھا تو اسے اندازہ ہوا کہ بڑی عمدہ تحریر ہے۔ اس نے اپنے ناشر سے کہا کہ یہ ناول قابلِ اشاعت ہے۔ ناشر اپنے مدیروں کے مقابلے میں اپنے کام یاب مصنّفوں کی سفارش کو زیادہ معتبر سمجھتے ہیں۔ ناول شائع کر دیا گیا اور صرف شائع نہیں ہوا بلکہ امریکا کے سب سے اہم ادبی انعام پلٹزر پرائز کا مستحق بھی گردانا گیا۔ لیکن اس سے بیچارے مصنّف کو کیا ملا؟

یہ کوئی واحد مثال نہیں۔ ادب اور فن کے میدان میں بڑے بڑے فن کاروں کے ساتھ یہی سلوک ہوا۔فان گوخ، جس کی تصویریں اب کروڑوں میں بکتی ہیں، مفلسی میں فوت ہوا۔ موتزارٹ کے پائے کا موسیقار مغرب میں کوئی کوئی ہو گا۔ وہ بھی مفلوک الحال مرا۔

یہاں ایک لطیفہ یاد آیا۔ ڈورس لیسنگ نے ادب کا نوبیل انعام ملنے کے بعد اپنا نیا ناول کسی فرضی مصنّف کے نام سے اپنے ناشر کو بھجوا دیا۔ ناشر نے یا اس کے مدیروں نے بلا تامل اسے مسترد کر دیا۔

ایملی ڈکنسن کا اب سربرآوردہ امریکی شاعروں میں شمار کیا جاتا ہے۔ زندگی میں اس کی کوئی قدر نہ ہوئی۔ شاید چھ یا سات نظمیں شائع ہوئیں۔ مدیر اس کی نظموں کو سمجھ ہی نہ سکے۔ سوچا کہ یہ تو مفہوم ٹھیک سے ادا کرنے پر بھی قادر نہیں۔ اوقات نگاری بھی بے ڈھنگی ہے۔ انہوں نے نظموں کو اپنی دانست میں ٹھیک کر کے مگر پوری طرح بگاڑ کر چھاپا۔ نظموں کی درگت بنتے دیکھ کر وہ چھپنے چھپانے سے تائب ہو گئی۔ ایک قصبے میں عزلت گزیں ہو کر پوری زندگی گزار دی۔

وفات کے بعد اس کے جاننے والوں نے اس کی نظمیں، جن کی تعداد تقریباً اٹھارہ سو تھی، چھپوا دیں۔ ان کی بھی سمجھ میں نہ آیا کہ نظموں میں جو اندازِ بیان اختیار کیا گیا ہے اس کی معنویت کیا ہے۔ چنانچہ انہوں نے بھی، اپنی سمجھ کے مطابق، نظموں کو ٹھیک ٹھاک کر کے چھاپا۔ دوسرے لفظوں میں نظموں کی انفرادیت کو ملیا میٹ کر دیا۔ ایملی ڈکنسن کے صحیح ادبی مقام کا تعین کہیں بیسویں صدی میں جا کر ہوا۔ اپنے وقت سے پہلے پیدا ہونے کی سزا مل کر رہتی ہے۔

قصہ مختصر یہ کہ باصلاحیت ہونے سے کوئی فرق نہیں پڑتا۔ عین ممکن ہے کہ آپ کو قدر دان ہی نصیب نہ ہوں۔ بعض ادیب اور شاعر اپنی زندگی میں مشہور ہو جاتے ہیں۔ بعد میں ان کا کوئی نام بھی نہیں لیتا۔ بعضوں کو جیتے جی کوئی داد نہیں ملتی۔ بعد میں ان کا بڑا چرچا ہوتا ہے۔

یوں کہیے کہ فن ایک دریا ہے۔ بعض لوگ کسی نہ کسی طرح تیر کر دوسرے کنارے پر جا پہنچتے ہیں۔ وہاں ان کو خوش آمدید کہا جاتا ہے یا نظر انداز کر دیا جاتا ہے، کون جانے۔ اور جو ڈوب جاتے ہیں وہ بھی کہیں نہ کہیں پہنچ ہی جاتے ہوں گے۔

(محمد سلیم الرحمٰن کی تحریر سے اقتباس)

Comments

یہ بھی پڑھیں