The news is by your side.

Advertisement

اردوسائنس ایوارڈ کی لاہورمیں تقریب

سائنس مصنفین کو ایوارڈ اورانعامی رقم سے نوازا گیا

لاہور: اردو سائنس بورڈ  کے دفتر میں ادارے کی جانب سے منعقدہ دوسرے ایوارڈ کی تقریب ہوئی جس میں مصنفین اورمترجمین کو ایوارڈ اور انعامی رقم سے نوازا گیا۔

تفصیلات کے مطابق  آج بروز جمعہ لاہور میں واقع اردو سائنس بورڈ کے دفتر میں سائنسی کتب  لکھنے والے مصنفین کے اعزاز میں ایک سادہ سی تقریب کا انعقاد کیا گیا جس میں کوئٹہ سے تعلق رکھنے والی صادقہ خان، لاہور کے منیب علی اور  گجرات کے پروفیسر ارشد علی کو  ایوارڈ شیلڈز دی گئیں۔

اس ایوارڈ کا اعلان رواں سال چھ فروری کو کیا گیا تھا اور اس میں کوئٹہ سے تعلق رکھنے والی مصنفہ صادقہ خان کی کتاب ’شاندارڈیزائن‘ کو پہلے، لاہورسے تعلق رکھنے والے سید منیب علی کی کتاب’قدرت‘ کو دوسرے اورگجرات یونیورسٹی کے اسسٹنٹ پروفیسر ڈاکٹرارشدعلی کی کتاب ’جدید فلم سازی‘ کو تیسرے انعام کے لیے منتخب کیاگیاہے۔

مقابلے میں ملک بھر سے سائنسی موضوعات پر لکھنے والے مصنفین اور مترجمین نے اپنی کتابیں بھیجی تھیں ،  انعام یافتہ کتابوں کاانتخاب معروف ادیبوں، مصنفین اورمترجمین کے پینل نے کیا۔

ایوارڈ جیتنے والے مصنفین

پہلے، دوسرے اورتیسرے نمبرپر آنے والی کتابوں کے مصنفین کو بالترتیب پچاس ہزار، تیس ہزاراوربیس ہزارروپے نقد انعام ، شیلڈاورسرٹیفکیٹ دینے کی تقریب  اردو سائنس بورڈ لاہور کے دفتر میں منعقد کی گئی۔

تقریب کے مہمانِ خصوصی  قومی تاریخ و ادبی ورثہ ڈویژن کے سینئر جوائنٹ سیکرٹری حسنین مہدی  تھے جبکہ تقریب میں اردو سائنس بورڈ کے سربراہ ڈاکٹرناصرعباس نیئرنے سپاس نامہ بھی پیش کیا۔

ڈائریکٹرجنرل اردوسائنس بورڈ ڈاکٹر ناصرعباس نیر نے اردوسائنس ایوارڈجیتنے والے مصنفین اورمترجمین کو مبارک باددیتے ہوئے کہا کہ کتابوں پرانعامات دینے کامقصداردومیں سائنسی کتب لکھنے والے مصنفین کی حوصلہ افزائی اورمعاشرے میں کتب بینی اورمطالعہ کافروغ ہے۔

 یا درہے کہ اردو سائنس بورڈ نےسنہ  2017ء میں سائنسی کتابوں پر اردوسائنس ایوارڈ کا سلسلہ شروع کیا تھا  جو کہ ہر سال  بہترین سائنسی کتابوں پردیاجاتاہے۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں