The news is by your side.

Advertisement

پچیس منزلہ عمارت، تیرہویں‌ منزل اور 74 برس کا شاعر

بزرگوں کی اکثریت ایسی ہوتی ہے جنھیں دیکھ کر آدمی عبرت پکڑتا ہے، لیکن بعض خوش نصیب بزرگ ایسے بھی ہوتے ہیں جنھیں دیکھ کر آدمی عبرت کے سوائے ہر چیز کو پکڑ لیتا ہے، جیسے تین سال پہلے ایک دن میں نے کنور صاحب (کنور مہندر سنگھ بیدی سحر) کو دیکھ کر اپنا کلیجہ پکڑ لیا تھا۔

یہ اُس دن کی بات ہے جب دہلی میں ہر دن کی طرح بجلی فیل ہوگئی تھی۔ مجھے اور کنور صاحب کو دہلی کی ایک پچیس منزلہ عمارت کی ساتویں منزل پر پہنچنا تھا اور لفٹ بند تھی۔ کام چوں کہ میرا تھا اسی لیے میں نے کنور صاحب سے کہا، ’’میرا کام اتنا ضروری نہیں ہے کہ آپ ساتویں منزل تک چڑھ کر جائیں اور پھر آپ کی عمر بھی تو 74 برس کی ہوچکی ہے۔‘‘

میرے اس جملے کو سنتے ہی اُن کے بڑھاپے پر شباب آگیا اور وہ بڑی تیزی کے ساتھ سیڑھیاں چڑھنے لگے۔ میں انہیں منع کرتا رہا، سمجھاتا رہا کہ میں نے یہ جملہ اس لیے نہیں کہا کہ وہ 74 برس کے ہوگئے ہیں بلکہ اس لیے کہا ہے کہ میں 48 برس کا ہوچکا ہوں۔ مسئلہ میرے ضعف کا ہے، اُن کے ضعف کا نہیں، مگر وہ نہ مانے اور سیڑھیاں چڑھتے چلے گئے بلکہ اکثر موقعوں پر تو دو دو سیڑھیاں ایک ہی قدم میں پھلانگ ڈالیں۔

میں اُن کے پیچھے ہانپتا کانپتا سیڑھیاں چڑھنے لگا۔ میرے روکنے کا کوئی اثر ان پر نہیں ہوا۔ بالآخر اس سفر میں ایک نوبت وہ بھی آئی جب وہ مجھ سے دو منزل آگے ہوگئے۔ ان کے قدموں کی چاپ تو سنائی دے رہی تھی، مگر وہ خود دکھائی نہیں دے رہے تھے۔ میں گرتا پڑتا ساتویں منزل پر پہنچا جہاں ہمیں ایک شخص سے ملنا تھا۔ میں نے اپنی اُکھڑی اُکھڑی سانسوں کو بڑی مشکل سے یکجا کر کے ان صاحب سے پوچھا کہ کہیں کنور صاحب اِدھرآ تو نہیں گئے۔

وہ بولے ’’کنور صاحب تو نہیں آئے البتہ میں نے ابھی کچھ دیر پہلے سیڑھیوں پر ایک سردار جی کی جھلک دیکھی ہے جو بڑی تیزی سے اوپر جارہے تھے۔‘‘

میں نے کہا، ’’وہی تو کنور صاحب تھے جو آپ سے ملنے کے لیے اس عمارت میں آئے ہیں۔‘‘

’’تو پھر وہ اُوپر کیوں چلے گئے؟‘‘ اُن صاحب نے حیرت سے پوچھا۔

میں نے کہا ’’کچھ نہیں ذرا جوشِ جوانی میں اوپر تک چلے گئے ہیں، ابھی آجائیں گے۔‘‘ کچھ دیر بعد کنور صاحب نیچے آگئے۔ پتہ چلا کہ میرے جملے نے انہیں اتنا مشتعل کیا کہ تیرہ منزلوں تک چڑھتے چلے گئے۔ تیرہویں منزل پر اشتعال کچھ کم ہوا تو انھیں احساس ہوا کہ ساتویں منزل پر ہی رُکنا تھا۔

مجھ سے کہا، ’’تم کیسے جوان ہو۔ سات منزلیں تک نہیں چڑھ سکتے۔ کیا ابھی سے تم پر بڑھاپا آگیا ہے۔ مجھے دیکھو کہ 74 برس کا ہوچکا ہوں مگر آج بھی یہ حال ہے کہ ساتویں منزل پر کوئی کام ہو تو تیرہ منزل تک چڑھ جاتا ہوں۔‘‘

میں نے اپنی ہار مانتے ہوئے معذرت کی اور اپنی صفائی میں ایک دانا کا قول سنایا کہ ’’بیس برس کی عمر کا گدھا، ساٹھ برس کے آدمی سے کہیں زیادہ بوڑھا ہوتا ہے، کیوں کہ بڑھاپے کا تعلق کسی مخلوق کی عمر سے نہیں، اس کے قویٰ سے ہوتا ہے۔‘‘ کنور صاحب اس قول سے ایسے ہی محظوظ ہوئے جیسے کہ ایک سچے سکھ کو ہونا چاہیے۔

(ہندوستان کے مشہور شاعر کنور مہندر سنگھ بیدی سحر سے متعلق معروف مزاح نگار مجبتیٰ حسین کے مضمون سے اقتباس)

Comments

یہ بھی پڑھیں