The news is by your side.

امریکا و برطانیہ نے روس پر ایک بار پھر سائبر حملوں کا الزام لگا دیا

واشنگٹن: امریکا اور برطانیہ نے اپنے سب سے بڑے حریف ملک روس پر ایک بار پھر الزام لگایا ہے کہ وہ مختلف ممالک کے اداروں پر سائبر حملے کر رہا ہے۔

واشنگٹن اور لندن آفیشلز نے خبردار کیا ہے کہ ماسکو بہت سے ممالک کے حکومتی اداروں کے زیر استعمال کمپیوٹر نیٹ ورکس اور انفارمیشن ٹیکنالوجی کے حساس بنیادی ڈھانچوں پر سائبر حملوں میں ملوث ہے۔

آفیشلز کی جانب سے جاری ہونے والی رپورٹس کے مطابق روس کی جانب سے متعدد ممالک کے سرکاری اداروں کے کمپیوٹر راؤٹرز، فائر والز اور دیگر نیٹ ورکنگ تنصیبات کو مستقل طور پر نشانہ بنایا جارہا ہے۔

رپورٹس کے مطابق سائبر حملے کرنے والے ہیکرز کو روسی حکومت کی سرپرستی حاصل ہے جو جدید سطح کی سائبر جاسوسی کرکے دانش ورانہ املاک چوری کرتے ہیں اور خدشہ ہے کہ یہ سرگرمیاں بڑے سائبر حملوں کی شکل اختیار کرسکتی ہیں۔

روسی ہیکرز نے ٹی وی چینل ہیک کرکے جہادی مواد نشر کردیا

واضح رہے کہ ماضی میں بھی روس پر الزام لگا تھا کہ اس نے کمپیوٹر وائرس NotPetya کے ذریعے مشرقی یورپی ملک یوکرائن اور عالمی سطح پر بڑے کاروباری اداروں کو اربوں ڈالر کا نقصان پہنچایا ہے۔

لندن میں روسی سفارت خانے نے اس الزام پر رد عمل ظاہر کرتے ہوئے کہا ہے کہ امریکا اور برطانیہ کا یہ مشترکہ الزام ثابت کرتا ہے کہ دونوں ممالک روس کے خلاف بے بنیاد الزامات اور اشتعال انگیز پالیسی جاری رکھے ہوئے ہیں۔


خبر کے بارے میں اپنی رائے کا اظہار کمنٹس میں کریں‘ مذکورہ معلومات کو زیادہ سے زیادہ لوگوں تک پہچانے کے لیے سوشل میڈیا پر شیئر کریں۔

Print Friendly, PDF & Email

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں