site
stats
عالمی خبریں

بھارت میں مذہبی آزادی کی بدتر صورتحال، امریکی کانگریس ارکان میں تشویش

واشنگٹن : بھارت میں مذہبی آزادی کی بدترصورتحال پر امریکی ارکان کانگریس نے تشویش ظاہرکردی ہے، اسپیکر پال رائن کو لکھے گئے خط میں معاملہ بھارتی وزیراعظم نریندرمودی کے سامنے اٹھانے کا مطالبہ کردیا۔

بھارت میں مذہبی آزادی کی بدترین صورتحال نے امریکی ارکان کانگریس کو بھی تشویش میں مبتلا کردیا، کانگریس کے ارکان نے اسپیکر کو خط میں معاملہ نریندری مودی سے اٹھانے کا مطالبہ کردیا۔

اٹھارہ اراکین کانگریس نے مطالبہ کیا کہ بھارت میں مذہبی آزادی کی بدترین صورتحال کا نوٹس لیا جائے، گجرات میں دوہزارمسلمان قتل اورایک لاکھ بے گھرہوئے لیکن مودی نے آج تک مذمت کا ایک لفظ نہ کہا۔

خط میں کہا گیا ہے کہ بھارت میں اقلیتیں کئی دہائیوں سے مظالم کا شکار ہیں، مودی سے ملاقات میں مذہبی آزادی کا معاملہ سرفہرست رکھا جائے۔

اس سے قبل امریکی اراکین کانگریس نے بھارتی وزیراعظم نریندر مودی کے نام ایک خط میں بھارت میں اقلیتوں کے خلاف بڑھتے ہوئے تشدد اور عدم برداشت پر گہری تشویش کا اظہار کیا تھا۔

امریکی اراکین نے وزیر اعظم مودی پر زوردیا ہے کہ وہ مذہبی بنیادوں پر اقلیتوں کے خلاف تشدد کو روکنے کیلئے عملی اقدامات کریں۔ اس خط پر آٹھ سینیٹرز اور 26 ارکان کانگریس نے دستخط کئے ہیں۔ خط میں بھارت میں ہندوﺅں کی جانب سے عیسائیوں، مسلمانوں اور سکھوں کے خلاف ناروا سلوک پر گہری تشویش کا اظہار کیا گیا تھا۔

Print Friendly, PDF & Email
20

Comments

comments

اس ویب سائیٹ پر موجود تمام تحریری مواد کے جملہ حقوق@2018 اے آروائی نیوز کے نام محفوظ ہیں

To Top