The news is by your side.

Advertisement

امریکی صدر کا شام میں فوج تعینات رکھنے کا فیصلہ

واشنگٹن: امریکی صدر نے قومی سلامتی کونسل کے اجلاس میں کہا کہ شام سے فوج کی جلد واپسی چاہتے ہیں لیکن امریکی فوجیوں کی تعیناتی مزید کچھ عرصے کے لیے برقرار رکھنے کا فیصلہ کیا ہے ۔

ان خیالات کا اظہار امریکا کے ایک سینئر عہدیدار نے اپنے ایک بیان میں کیا، ان کا کہنا ہے کہ صدر ٹرمپ نے شام سے امریکی فوجیوں کو فوری واپس بلانے کی منظوری نہیں دی ہے۔

امریکی صدر داعش کے جنگجوؤں کی شکست کو یقینی بنانا چاہتے ہیں، لیکن وہ یہ بھی چاہتے ہیں کہ خطے کے دیگر ممالک اور اقوام متحدہ شام میں استحکام کے لیے ان کی مدد کریں۔

مزید پڑھیں: صدر ٹرمپ نے شام سے امریکی فوج واپس بلانے کا اعلان کردیا

امریکی عہدیدارکا کہنا ہے کہ ہم فوری طور پر اںخلا کرنے والے نہیں لیکن صدر نے ایک طویل مدت کے لیے وہاں فوجی تعینات رکھنے کی تجویز کی حمایت بھی نہیں کی ہے۔

واضح رہے کہ اس سے قبل امریکی صدر ٹرمپ نے ورجینیا میں تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کہا تھا کہ شام میں امریکی فوج کا کام داعش کو شکست دینا تھا، فوج نے یہ کام بخوبی انجام دیا اور فوجی اہلکار جلد اپنی سرزمین پر واپس پہنچ جائیں گے۔

پینٹاگون کے ترجمان کا کہنا تھا کہ امریکی فوج کو شام میں رہنے کی ضرورت ہے، جب تک آخری دہشت گرد کا خاتمہ نہ ہوجائے، اس وقت 2000 سے زائد فوجی شام میں موجود ہیں۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں