The news is by your side.

Advertisement

امریکی سفارت خانہ 2019 میں یروشلم منتقل کردیں گے‘ مائیک پنس

تل ابیب: امریکی نائب صدر مائیک پنس کا کہنا ہے کہ امریکہ سفارت خانہ 2019 میں تل ابیب سے یروشلم منتقل کردیا جائے گا۔

تفصیلات کے مطابق امریکی نائب صدر مائیک پنس نے اسرائیلی پارلیمنٹ سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ امریکی سفارت خانہ 2019 کے آخر تک یروشلم منتقل کردیا جائے گا۔

امریکی نائب صدر کی تقریر کے دوران اسرائیلی پارلیمنٹ کے عرب ممبران کی جانب سے احتجاج کیا گیا جس کے باعث مائیک پنس کو اپنی تقریر روکنی پڑی۔

اسرائیلی پارلیمنٹ میں احتجاج کرنے والے عرب ممبران نے ’یروشلم فلسطین کا دارالحکومت‘ کے بینرزاٹھا رکھے تھے۔

امریکی نائب صدر مائیک پنس نے تقریر کے دوران فلسطینی قیادت سے کہا کہ وہ مذاکرات کی میز پردوبارہ آئیں۔

دوسری جانب فلسطینی صدرمحمود عباس امریکی نائب صدر سے ملاقات کے بجائے برسلز روانہ ہوگئے۔

خیال رہے کہ گزشتہ ماہ 8 دسمبرکو امریکہ نے فلسطین کودھمکی دی تھی کہ امریکی نائب صدرمائیک پینس سے فلسطینی صدرکی ملاقات منسوخ کرنے کے نتائج اچھے نہیں ہوں گے۔


فلسطینی صدرنےامریکی نائب صدرسےملاقات منسوخ کردی


بعدازاں فلسطینی صدر کے سیاسی مشیر ماجدی الخالدی کی جانب سے امریکی بیان پرردعمل سامنے آیا تھا کہ فلسطین میں امریکی نائب صدر مائیک پنس سے کوئی ملاقات نہیں ہوگی۔

یاد رہے کہ رواں ماہ 15 جنوری کو فلسطینی صدرمحمود عباس نے کہا کہ امریکہ کی جانب سے یروشلم کو اسرائیلی دارالحکومت تسلیم کرنے کے بعد ان کی جانب سے کسی امن منصوبے کو قبول نہیں کریں گے۔


اگر آپ کو یہ خبر پسند نہیں آئی تو برائے مہربانی نیچے کمنٹس میں اپنی رائے کا اظہار کریں اور اگر آپ کو یہ مضمون پسند آیا ہے تو اسے اپنی وال پر شیئر کریں۔

Print Friendly, PDF & Email

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں