امریکا: یہودی معبد پر حملہ، ملزم نے بے گناہی کی درخواست دائر کردی USA
The news is by your side.

Advertisement

امریکا: یہودی معبد پر حملہ، ملزم نے بے گناہی کی درخواست دائر کردی

واشنگٹن : امریکا میں واقع یہودی معبد پر حملہ کرکے متعدد افراد کو ہلاکت کرنے کے شخص نے عدالت میں بے گناہی کی درخواست جمع کروا دی۔

تفصیلات کے مطابق مسلح شخص نے امریکی ریاست پینسل وینیا کے شہر پٹس برگ میں واقع یہودی عبادت گاہ میں گھس کر اندر موجود تمام افراد کو یرغمال بنالیا تھا بعد ازاں حملہ آور نے فائرنگ کرکے‌ 11 افراد کو ہلاک کردیا تھا۔

غیر ملکی خبر رساں ادارے کا کہنا تھا کہ پولیس نے ملزم کو ہتھکڑیاں لگاکر عدالت میں پیش کیا تو مذکورہ شخص نے الزامات سے واقفیت کا اظہار کیا، عدالت میں جرم ثابت ہونے پر ملزم رابرٹ براؤر کو سزائے موت بھی ہوسکتی ہے۔

امریکی خبر رساں ادارے کا کہنا تھا کہ پولیس نے ملزم پر فائرنگ، دستی بم سے حملہ اور نفرت پھیلانے سمیت 44 الزامات عائد کیے ہیں۔

امریکی خبر رساں ادارے کا کہنا تھا کہ 46 سالہ ملزم نے ہفتے روز یہودی معبد خانے میں داخل ہوکر اے آر 15 رائفل سے فائرنگ کی تھی اور 3 دستی بم بھی پھینکے تھے جس کی زد میں آکر 11 افراد ہلاک اور 6 سے زائد زخمی ہوئے تھے۔

امریکی حکام کا کہنا ہے کہ رابرٹ براؤر نے ہلاک شدگان کے آئین کے مطابق دی گئی مذہبی آزادی کو غصب کیا جو ریاست نے انہیں دی تھی، امریکی محکمہ انصاف کا کہنا ہے کہ ملزم کو مذکورہ الزامات کے تحت سزائے موت یا عمر قید کی سزا ہوسکتی ہے۔

خیال رہے کہ مسلح شخص نے یہودی عبادت گاہ میں داخل ہوکر چیخ کر کہا تھا کہ ’تمام یہودیوں کو لازمی مرنا ہوگا‘۔

امریکی میڈیا کا کہنا تھا کہ مذکورہ مسلح شخص سوشل میڈیا پر یہودی مخالف کمنٹس کرتا رہتا تھا۔

غیرملکی خبر رساں ادارے کے مطابق یہودیوں کی غیر سرکاری تنظیم کا کہنا ہے کہ ہماری عبادت گاہ پر ہونے والا حملہ امریکی تاریخ کا سب سے بڑا حملہ ہے۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں