The news is by your side.

Advertisement

امریکہ سے جیسا بیان آئے گا، ویسا ہی جواب دیا جائےگا‘ خواجہ آصف

اسلام آباد : وزیرخارجہ خواجہ آصف کا کہنا ہے کہ افغانستان میں امریکی وزیرخارجہ 16 سال بعد بھی بیس سے باہرنہ نکل سکا، ملاقات کے لیے افغان صدر کو بنکر میں مدعو کیا جاتا ہے۔

قومی اسمبلی کی قائمہ کمیٹی برائے خارجہ امورکےاجلاس میں وزیرخارجہ خواجہ آصف نے کہا کہ امریکہ کے ساتھ شفاف تعلقات چاہتے ہیں، پاک امریکہ تعلقات پرپارلیمنٹ سے رہنمائی لیں گے۔

وزیرخارجہ نے کہا کہ مشرف دور میں جو کچھ ہوا وہ ہماری تاریخ کا سیاہ باب ہے، پارلیمنٹ کو باہر رکھ کر تعلقات رکھنے کے نتائج بہت بھیانک ہیں۔

انہوں نے کہا کہ پاکستان میں سیکورٹی صورت حال بہت بہتر ہے اور ڈرون حملے اب ختم ہوچکے ہیں۔

وزیرخارجہ نے کہا کہ امریکہ کو بتا دیا کہ بھارت کا کردار انتشار پر مبی ہے، بھارت این ڈی ایس کےساتھ مغربی سرحد بھی غیرمحفوظ کررہا ہے۔

انہوں نے کہا کہ امریکہ سمجھتا ہے ہم طالبان کو ان کے خلاف استعمال کرتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان کا افغان طالبان پر اثرورسوخ کم ہوگیا ہے کئی علاقوں میں طالبان اور داعش کی لڑائی ہے۔

وزیرخارجہ خواجہ آصف نے کہا کہ ہم خلوص کے ساتھ خطے میں امن چاہتے ہیں، قومی مفاد پر کسی صورت سمجھوتا نہیں کیا جائے گا۔ انہوں نے کہا کہ پورا تعاون کریں گے لیکن کسی کی ناکامی کا ملبہ قبول نہیں کریں گے۔


پاکستان سے تعلقات کو اہمیت کی نگاہ سے دیکھتے ہیں، امریکی وزیرخارجہ


یاد رہے کہ دو روز قبل امریکی وزیرخارجہ ریکس ٹلرسن کا کہنا تھا کہ پاکستان سے تعلقات کو اہمیت کی نگاہ سے دیکھتے ہیں، دہشت گردی کےخلاف جنگ میں پاکستان کی قربانیاں قابل قدر ہیں۔


اگر آپ کو یہ خبر پسند نہیں آئی تو برائے مہربانی نیچے کمنٹس میں اپنی رائے کا اظہار کریں اور اگر آپ کو یہ مضمون پسند آیا ہے تو اسے اپنی فیس بک وال پر شیئر کریں۔

Print Friendly, PDF & Email

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں