The news is by your side.

Advertisement

روس : دنیا میں پہلی بار جانوروں کو کورونا ویکسین لگانے کی تیاری

ماسکو : دنیا میں پہلی بار  روس نے انسانوں کے بعد اب جانوروں کو بھی باقاعدہ کورونا ویکسین لگانے کی تیاری کرلی، ویکسین کلینیکل ٹرائلز کا آغاز گزشتہ سال کیا گیا تھا۔

غیر ملکی خبر رساں ادارے کے مطابق روسی واچ ڈاگ کے نائب سربراہ کونسٹنٹن ساوینکوف نے میڈیا کو بتایا ہے کہ کوویڈ19 کے خلاف دنیا کی پہلی جانوروں کی ویکسین جسے فیڈرل سروس فار ویٹرنری اینڈ فائٹسو انٹری سرویلنس (روز سلخوزناڈزور) کے سائنس دانوں نے تیار کیا روس میں اندرج کیا گیا ہے۔

اس ویکسین کا نام “کارنیواک، کوو” رکھا گیا ہے، ان کا کہنا تھا کہ مذکورہ ویکسین گوشت خور جانوروں کے لئے کورونا وائرس انفیکشن کوویڈ19 کے خلاف ایک مؤثر ویکسین ہے، جسے روسیلز کوزناڈزور کے فیڈرل سینٹر برائے جانوروں کی صحت نے تیار کیا ہے اور اب یہ روس میں رجسٹرڈ بھی ہوچکی ہے۔

روسی واچ ڈاگ کے نائب سربراہ نے کہا کہ اب تک یہ جانوروں میں کوویڈ 19 کی انفیکشن کو روکنے کے لئے دنیا کا پہلا اور واحد منصوبہ ہے۔

عہدیدار نے مزید بتایا کہ فیڈرل سنٹر برائے اینیمل ہیلتھ جانوروں سے متعلق مصنوعات تیار کرنے والے ملک کے سب سے بڑے پلیٹ فارم کی بنیاد پر کوویڈ 19 کے خلاف دنیا کی پہلی جانوروں کی ویکسینیشن روس میں اپریل کے اوائل میں شروع کی جاسکتی ہے۔

ساوینکوف کے مطابق “کارنیواک” کے کلینیکل ٹرائلز کا آغاز گزشتہ سال اکتوبر میں ہوا تھا اور اس کے تجربات میں کتے، بلیوں، لومڑیوں اور آرکٹک، لومڑیوں، راہبوں اور دیگر جانوروں کو شامل کیا گیا تھا۔

انہوں نے بتایا کہ تحقیق کے ٹرائلز ہمیں یہ نتیجہ اخذ کرنے کی بنیاد فراہم کرتے ہیں کہ یہ ویکسین محفوظ ہے اور اس کا مضبوط مدافعتی اثر ہے کیونکہ تمام حفاظتی ٹیکوں والے جانوروں نے ناول کورونا وائرس کے خلاف 100 فیصد اینٹی باڈیز تیار کیں۔

ساوینکوف کے مطابق روسی سائنس دان اپنی تحقیق جاری رکھے ہوئے ہیں تاکہ یہ معلوم کرسکیں کہ اس ویکسین کا اثر کتنے دن تک رہے گا۔ انہوں نے کہا فی الحال اس وقت اس ویکسین کے جانوروں میں اثر کا تخمینہ چھ ماہ تک لگایا گیا ہے۔

Comments

یہ بھی پڑھیں