The news is by your side.

Advertisement

آج انگریزی ادب کی معروف ادیب ورجینیا وولف کا134واں یوم پیدائش ہے

آج انگریزی ادب کی معروف ادیب اورحقوقِ نسواں کی سب سے نمایاں علم بردار ورجینیا وولف کا یومِ پیدائش ہے۔ انہوں نے لازوال شہرت کے حامل متعدد ناول، مضامین اور افسانے تحریر کیے

مشہور ﺍﻧﮕﺮﯾﺰ ﺍﺩﯾﺒﮧ ﻭﺭﺟﯿﻨﯿﺎ ﻭﻭﻟﻒ 25 ﺟﻨﻮﺭﯼ 1882 ﺀ کو لندن میں ﭘﯿﺪﺍ ﮨﻮﺋﯿﮟ۔ ﺍُﻥ ﮐﮯ ﻭﺍﻟﺪ لیسلی اسٹیفن ﺍﯾﮏ ﺍﺩﯾﺐ ﺗﮭﮯ۔ ﻭَﺭﺟﯿﻨﯿﺎ ﺍﻭﺭ ﺍُﻧﮑﮯ ﺑﮩﻦ ﺑﮭﺎﺋﯿﻮﮞ ﻧﮯ ﮐﺴﯽ ﺍﺳﮑﻮﻝ ﺟﺎﻧﮯ ﮐﯽ ﺑﺠﺎﺋﮯ ﮔﮭﺮ ﭘﺮ ﮨﯽ ﺗﻌﻠﯿﻢ ﺣﺎﺻﻞ ﮐﯽ، ﺟﺲ ﮐﮯﻟﺌﮯ ﻗﺎﺑﻞ ﺍﺳﺎﺗﺬﮦ ﺑﺎﻗﺎﻋﺪﮦ ﮔﮭﺮ ﺁﯾﺎ ﮐﺮﺗﮯ ﺗﮭﮯ۔ ﻭﮦ 13 ﺑﺮﺱ ﮐﯽ ﺗﮭﯿﮟ ﮐﮧ ﺍُﻥ ﮐﯽ ﻭﺍﻟﺪﮦ ﮐﺎ ﺍﻧﺘﻘﺎﻝ ﮨﻮ ﮔﯿﺎ ﺍﻭﺭ ﻭﮦ ﭘﮩﻠﯽ ﻣﺮﺗﺒﮧ ﺍﯾﮏ ﺑﮍﮮ ﻧﻔﺴﯿﺎﺗﯽ ﺑﺤﺮﺍﻥ ﺳﮯ ﺩﻭﭼﺎﺭ ﮨﻮﺋﯿﮟ۔ ﺍُﺱ ﮐﮯ ﮐﭽﮫ ﮨﯽ ﻋﺮﺻﮯ ﺑﻌﺪ ﻭﮦ ﺟﻨﺴﯽ ﺯﯾﺎﺩﺗﯽ ﮐﺎ ﻧﺸﺎﻧﮧ ﺑﻨﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﯾﮧ ﻭﺍﻗﻌﮧ ﻋﻤﺮ ﺑﮭﺮ ﮐﮯ ﺍﯾﮏ ﺭﻭﮒ ﮐﯽ ﺷﮑﻞ ﺍﺧﺘﯿﺎﺭﮐﺮﮔﯿﺎ۔


ﺗﺎﮨﻢ ﯾﮧ ﻣﺎﯾﻮﺳﯿﺎﮞ ﺍُﻥ ﮐﯽ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﮐﺎ ﺻﺮﻑ ﺍﯾﮏ ﺭُﺥ ﮨﯿﮟ۔ ﺩﻭﺳﺮﺍ ﺭُﺥ ﯾﮧ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺷﺮﻭﻉ ﻣﯿﮟ ﻭﮦ ﺟﺮﯾﺪﮮ ﭨﺎﺋﻤﺰ ﮐﮯﻟﺌﮯ ﺑﺎﻗﺎﻋﺪﮔﯽ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﻣﻀﺎﻣﯿﻦ ﻟﮑﮭﺘﯽ ﺭﮨﯿﮟ، ﺍُﻥ ﮐﺎ ﮔﮭﺮ ﺍُﺱ ﻭﻗﺖ ﮐﮯ ﺍﮨﻢ ﺍﺩﯾﺒﻮﮞ ﮐﮯ ﻣﻞ ﺑﯿﭩﮭﻨﮯ ﮐﮯ ﺍﯾﮏ ﻣﺮﮐﺰ ﮐﯽ ﺷﮑﻞ ﺍﺧﺘﯿﺎﺭ ﮐﺮﮔﯿﺎ ﺍﻭﺭ ﺍِﻥ ﺍﺩﺑﯽ ﻣﺒﺎﺣﺚ ﻣﯿﮟ ﺍُﺱ ﺩَﻭﺭ ﮐﯽ ﺳﯿﺎﺳﺖ ، ﺍﺩﺏ ﺍﻭﺭ ﻓﻨﻮﻥ ﭘﺮ ﺑﮭﺮﭘﻮﺭ ﻃﺮﯾﻘﮯ ﺳﮯ ﺍﻇﮩﺎﺭِ ﺧﯿﺎﻝ ﮐﯿﺎ ﺟﺎﺗﺎ ﺗﮭﺎ۔ ﺍِﻥ ﻣﺤﻔﻠﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﻭَﺭﺟﯿﻨﯿﺎ ﺧﻮﺩ ﮐﻮ ﺍﯾﮏ ﺯﻧﺪﮦ ﺩِﻝ ﺷﺨﺼﯿﺖ ﮐﮯ ﻃﻮﺭ ﭘﺮ ﭘﯿﺶ ﮐﺮﺗﯽ ﺗﮭﯿﮟ ﻟﯿﮑﻦ ﺍﻧﺪﺭ ﺳﮯ ﻭﮦ نہایت ﺩُﮐﮭﯽ ﺗﮭﯿﮟ۔

1913 ﺀ ﻣﯿﮟ ﻣﻌﺮﻭﻑ ﺍﺩﺑﯽ ﻧﻘﺎﺩ Leonard Woolf ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﺷﺎﺩﯼ ﮐﮯ ﭼﻨﺪ ﮨﯽ ﻣﮩﯿﻨﮯ ﺑﻌﺪ ﺍُﻧﮩﻮﮞ ﻧﮯ ﺧﻮﺩﮐﺸﯽ ﮐﯽ ﭘﮩﻠﯽ ﮐﻮﺷﺶ ﮐﯽ۔ ﺗﺎﮨﻢ ﺍﺩﺏ ﺗﺨﻠﯿﻖ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﮯ ﺳﻠﺴﻠﮯ ﻣﯿﮟ ﺍُﻥ ﮐﯽ ﺭﻓﺘﺎﺭ ﺑﺪﺳﺘﻮﺭ ﺗﯿﺰی سے جاری ﺭﮨﯽ

1912 ﺀ ﮨﯽ ﻣﯿﮟ ﺍُﻥ ﮐﺎ ﭘﮩﻼ ﻧﺎﻭﻝ The Voyage Out ﺷﺎﺋﻊ ﮨﻮ ﭼﮑﺎ ﺗﮭﺎ۔ ﺍِﺱ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﮐﮯ ﺑﺮﺳﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺍُﻥ ﮐﮯ ﮐﺌﯽ ﻧﺎﻭﻝ ﺷﺎﺋﻊ ﮨﻮﺋﮯ، ﺟﻦ ﻣﯿﮟ ﺍﻧﺴﺎﻥ ﮐﮯ ﺷﻌﻮﺭﯼ ﺗﺎﻧﮯ ﺑﺎﻧﮯ ﮐﻮ ﺑﯿﺎﻥ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﯽ ﮐﻮﺷﺸﯿﮟ ﮐﯽ ﮔﺌﯽ ﺗﮭﯿﮟ۔

ﻭﺭﺟﯿﻨﯿﺎ ﻭﻭﻟﻒ ﻧﮯ ﮐُﻞ ﻧﻮ ﻧﺎﻭﻝ ﻟﮑﮭﮯ، ﺍﺱ ﮐﮯ ﺍﻓﺴﺎﻧﻮﮞ ﮐﮯ ﭼﮫ ﺍﻭﺭ ﻣﻀﺎﻣﯿﻦ ﮐﮯ ﭼﻮﺩﮦ ﻣﺠﻤﻮﻋﮯ ﺷﺎﺋﻊ ﮨﻮﺋﮯ، ﮈﺭﺍﻣﮧ ﺑﮭﯽ ﻟﮑﮭﺎ، ﺩﻭﺳﺘﻮﻓﺴﮑﯽ ﮐﮯ ﻧﻮﭨﺲ ﮐﺎ ﺍﻧﮕﺮﯾﺰﯼ ﻣﯿﮟ ﺗﺮﺟﻤﮧ ﺑﮭﯽ ﮐﯿﺎ۔ ﺍﺱ ﮐﯽ ﮈﺍﺋﺮﯾﺎﮞ ، ﯾﺎﺩﺩﺍﺷﺘﮟ، ﺧﻄﻮﻁ ﺍﻭﺭ ﻓﻮﭨﻮ ﮔﺮﺍﻓﮏ ﺍﻟﺒﻢ ﺍﻥ ﮐﮯ ﻋﻼﻭﮦ ﮨﯿﮟ۔ 148 ﻣﺴﺰ ﮈﯾﻠﻮﻭﮮ ( 1925 ) ﭨﻮ ﺩﯼ ﻻﺋﭧ ﮨﺎﻭٗﺱ ( 1927 ) ﺍﻭﺭ ﺁﻭﺭﻟﯿﻨﮉﻭ (1928 ) ﺍﺱ ﮐﮯ ﺍﮨﻢ ﻧﺎﻭﻝ ﮔﺮﺩﺍﻧﮯ ﺟﺎﺗﮯ ﮨﯿﮟ۔

ﺍﯾﮏ جگہ ﺍﺱ ﻧﮯ ﻟﮑﮭﺎ ﺗﮭﺎ 148 ﺩﻧﯿﺎ ﮐﮯ ﻋﻈﯿﻢ ﺷﺎﮨﮑﺎﺭ ﺍﻧﻔﺮﺍﺩﯼ ﮐﻮﺷﺶ ﺳﮯ ﻧﮩﯿﮟ ﺗﺨﻠﯿﻖ ﮨﻮ ﺟﺎﺗﮯ، ﺍﻥ ﮐﮯ ﭘﯿﭽﮭﮯ ﺑﮩﺖ ﺳﮯ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﮐﯽ ﻣﺪﺗﻮﮞ ﮐﯽ ﺳﻮﭺ ﺍﻭﺭ ﺗﺠﺮﺑﮧ ﺷﺎﻣﻞ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ۔ ﺍﯾﮏ اور ﺟﮕﮧ ﻭﮦ ﻟﮑﮭﺘﯽ ﮨﮯ 148 ﻣﯿﮟ ﺟﺐ ﺑﮭﯽ ﻟﮑﮭﻨﮯ ﺑﯿﭩﮭﺘﯽ ﮨﻮﮞ ، ﻣﯿﺮﮮ ﺍﻧﺪﺭ ﮐﯽ ﻋﻮﺭﺕ ﺟﺎﮒ ﺟﺎﺗﯽ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﻣﺠﮭﮯ ﮐﮩﺘﯽ ﮨﮯ ﮐﮧ ﻣﯿﺮﮮ ﺍﻭﺭ ﻣﯿﺮﮮ ﺟﯿﺴﯿﻮﮞ ﮐﮯ ﺑﺎﺭﮮ ﻣﯿﮟ ﻟﮑﮭﻮ۔
ورجینیا وولف ﺧﺎﺹ ﻃﻮﺭ ﭘﺮ ﻣﻐﺮﺑﯽ ﺩُﻧﯿﺎ ﻣﯿﮟ ﺣﻘﻮﻕِ ﻧِﺴﻮﺍﮞ ﮐﯽ ﺗﺤﺮﯾﮏ ﮐﯽ ﺑﺎﻧﯽ ﺷﺨﺼﯿﺎﺕ ﻣﯿﮟ ﺷﻤﺎﺭ ﮨﻮﺗﯽ ﮨﯿﮟ۔ ﺍُﻥ ﮐﯽ ﯾﮧ ﭘﮩﭽﺎﻥ ﺍﺗﻨﯽ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﻧﻤﺎﯾﺎﮞ ﮨﮯ ﮐﮧ ﮐﺒﮭﯽ ﮐﺒﮭﯽ ﺍُﻥ ﮐﺎ ﺍﯾﮏ ﺑﮯ ﻣﺜﻞ ﺍﺩﯾﺒﮧ ﮨﻮﻧﺎ ﭘﺲ ﻣﻨﻈﺮ ﻣﯿﮟ ﭼﻼ ﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ۔

ورجینیا وولف روزنامچہ لکھا کرتی تھیں ﯾﮧ ﺣﯿﺮﺕ ﺍﻧﮕﯿﺰ ﺍﻣﺮ ﮨﮯ ﺭﻭﺯﻧﺎﻣﭽﮧ ﻟﮑﮭﻨﮯ ﻭﺍﻟﮯ اکثر ﻣﺮﺩ ﮨﻮﺗﮯ ﮨﯿﮟ ۔ ﭘﮭﺮ ﺑﮭﯽ ﺩﻧﯿﺎ ﻣﯿﮟ ﺟﻮ ﻣﺸﮩﻮﺭ ﺭﻭﺯﻧﺎﻣﭽﮯ ﮨﻮ ﺋﮯ ﮨﯿﮟ، ﺍﻥ ﻣﯿﮟ ﺍﯾﮏ ﻭﺭﺟﯿﻨﯿﺎ ﻭﻭﻟﻒ ﺑﮩﺖ ﻣﺸﮩﻮﺭ ﮨﻮئی۔

ورجینیا وولف کو اپنے حساس طبعیت کی وجہ سے ﺑﺎﺭ ﺑﺎﺭ ﻣﺎﯾﻮﺳﯽ ﮐﮯ ﺩَﻭﺭﮮ ﭘﮍﺗﮯ ﺗﮭﮯ، ﺍُﻧﮩﯿﮟ ﺁﻭﺍﺯﯾﮟ ﺳﻨﺎﺋﯽ ﺩﯾﺘﯽ ﺗﮭﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﻭﮦ ﮐﺌﯽ ﮐﺌﯽ ﺭﻭﺯ ﺗﮏ ﮐﺎﻡ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﺮ ﺳﮑﺘﯽ ﺗﮭﯿﮟ۔ ﺩﻭﺳﺮﯼ ﻋﺎﻟﻤﯽ ﺟﻨﮓ ﮐﮯ ﺩﻭﺭﺍﻥ 1940 ﺀ ﻣﯿﮟ ﺟﺮﻣﻦ ﺟﻨﮕﯽ ﻃﯿﺎﺭﻭﮞ ﻧﮯ ﺍُﻥ ﮐﮯ ﻟﻨﺪﻥ ﮐﮯ ﮔﮭﺮ ﮐﻮ ﺗﺒﺎﮦ ﮐﺮ ﺩﯾﺎ جس کا انہیں شدید صدمہ پھنچا کیونکہ اس گھر سے ورجینیا وولف کی پچپن کی بہت سے یادیں وابسطہ تھیں

ورجینیا وولف کو بچپن سے موت سے محبت تھی اس نے 28 ﻣﺎﺭﭺ ﺳﻦ 1941 ﺀ ﮐﻮ ﻣﺎﯾﻮﺳﯿﻮﮞ ﺳﮯ ﮨﻤﯿﺸﮧ ﮐﮯ ﻟﺌﮯ چھٹکارہ حاصل کرنے کے لئے ورجینیا نے دریائے اووز میں ڈوب کر خودکشی کرلی۔ انکی لاش بیس روز بعد پانی سے ملی جسے ان کے شوہرنے نذرآتش کرکے راکھ کو گھر کے آنگن میں دفن کردیا۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں