The news is by your side.

Advertisement

چیونگم بڑھتے وزن کو قابو کرنے کا مؤثر ذریعہ

ٹوکیو: جاپان کےطبی ماہرین نے انکشاف کیا ہے کہ وزن کنٹرول کرنے کے لیے چیونگم بہت مددگار ثابت ہوتی ہے اور خاص طور پر چالیس سال سے زائد عمر کے لوگوں پر اس کے حیران کُن اثرات مرتب ہوتے ہیں۔

چہل قدمی اچھی صحت او رموٹاپے سے نجات کے لیے بے حد ضروری ہے مگر کیا آپ جانتے ہیں کہ کچھ لوگ باقاعدگی سے واک تو کرتے ہیں مگر اُن کے وزن میں کوئی کمی نہیں آتی۔

طبی ماہرین اچھی صحت کے لیے روزانہ چہل قدمی کا مشورہ دیتے ہیں تاکہ کسی بھی شخص کی فٹنس بہتر رہے اور  انسان چاک و چوبند رہے، بالخصوص موٹاپے سے عاجز افراد کو بھی ڈاکٹرز روزانہ واک کرنے کی تجویز دیتے ہیں۔

جاپان میں ہونے والی حالیہ تحقیق میں ماہرین نے انکشاف کیا ہے کہ چیونگم 40 برس سے زیادہ عمر کے مردوں کے وزن کو کنٹرول کرنے میں معاون ثابت ہوتی ہے اور اگر واک کے دوران خاص طور پر چیونگم چبائی جائے تو یہ حیران کُن اثرات مرتب کرتی ہے۔

مزید پڑھیں: چہل قدمی کے دوران کی جانے والی غلطیاں

طبی جریدے ’جرنل آف فزیکل تھراپی سائنس‘ میں شائع ہونے والی مطالعاتی رپورٹ کے مطابق اگر جسمانی سرگرمی کے دوران جیونگم چبائی جائی تو یہ وزن کو کنٹرول کرنے کا مؤثر ذریعہ ہے۔

رپورٹ کے مطابق تحقیق میں 46 شہریوں کو شامل کیا گیا جن کی عمریں 21 سے 69 برس کے درمیان تھیں، ان میں کچھ لوگ ایسے تھے جو بطور فیشن واک کے لیے باقاعدگی سے وقت نکالتے ہیں۔

طبی ماہرین نے تحقیق میں شامل کیے جانے والے افراد کی چہل قدمی کے دوران ہونے والی دل کی دھڑکی اور اُسکی رفتار، طے کیا جانے والا فاصلہ اور قدموں کی تداد سمیت جسمانی حرارت کا جائرہ لیا گیا۔

مطالعے میں شریک افراد کو ایک مخصوص مقام پر 15 منٹ کے لیے عام انداز میں چہل قدمی کی ہدایت کی گئی، ان افراد میں کچھ لوگ واک کے دوران چیونگم چپا رہے تھے جبکہ دیگر پانی کے کپ وغیرہ ہاتھوں میں لیے ہوئے تھے۔

تحقیق کے دوران حیران کُن طور پر وہ افراد جو چیونگم چبا رہے تھے اور جن کی عمریں چالیس برس یا اُس سے زیادہ تھی انہوں نے زیادہ فاصلہ طے کیا جبکہ ایسے لوگوں کا جسمانی درجہ حرارت بھی دیگر کے مقابلے میں زیادہ رہا۔

یہ بھی پڑھیں: روزانہ چہل قدمی، ماں بننے کے امکانات روشن

رپورٹ میں ماہرین نے یہ بات بھی لکھی کہ اگر واک کے دوران چیونگم نہ چبائی جائے تو توجہ ایک طرف ہی رہتی ہے جس کی وجہ سے ٹریک پر دوڑنا ایک دشوار گزار عمل لگتا ہے اور پھر زیادہ دیر تک چہل قدمی نہیں کی جاتی۔

قبل ازیں جاپان میں ہی ہونے والی تحقیق میں یہ بات بھی سامنے آچکی ہے کہ چیونگم چبانے سے دل کی دھڑکن تیز ہوجاتی ہے خواہ اس وقت انسان کوئی کام نہ بھی کررہا ہو۔


خبر کے بارے میں اپنی رائے کا اظہار کمنٹس میں کریں‘ مذکورہ معلومات  کو زیادہ سے زیادہ لوگوں تک پہنچانے کےلیے سوشل میڈیا پرشیئر کریں۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں