The news is by your side.

Advertisement

اے پی سی ہمارے مطالبے پر بلائی گئی، بلاول

اسلام آباد: پاکستان پیپلز پارٹی کے چیئرمین بلاول بھٹو زرداری نے کہا ہے کہ وزیراعظم نواز شریف نے پارلیمانی سربراہوں کے اجلاس میں تمام جماعتوں کو بلا کراچھا کیا، ہم نے دنیا کو پیغام دیا ہے کہ سارے پاکستانی کشمیر کے معاملے پر یکجا ہیں۔

یہ بات انہوں نے اسلام آباد میں میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہی۔ ان کے ہمراہ خورشید شاہ، شیری رحمن سمیت پی پی پی کے متعدد رہنما بھی موجود تھے۔

بلاول بھٹو زرداری کا کہنا تھا کہ اے پی سی میں وزیراعظم کو کچھ تجاویز دی تھیں،مسئلہ کشمیر پر ہمیں سیاست نہیں کرنی، تجویز دی تھی انسداد دہشت گردی پر پارلیمانی کمیٹی بنائی جائے،ہم سب اس وقت اتحاد چاہتے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ اقتصادی راہداری پیپلز پارٹی کا ویژن تھا، پاکستان کے دشمن اس وقت ہماری کمزوریاں دیکھ رہے ہیں، بھارت اس وقت بیک فٹ پر ہے، دنیا کو پیغام دیا ہے کہ سارے پاکستانی کشمیر کے معاملے پر یکجا ہیں۔

چیئرمین پیپلز پارٹی کا کہنا تھا کہ قومی اسمبلی اور سینیٹ صرف نواز شریف یا کسی اور کی جاگیر نہیں اس لیے ہم بائیکاٹ کیوں کرتے؟ ہم اپنے قومی مفاد کو آگے رکھنا چاہتے ہیں، حکومت میں شامل لوگ بھی روٹ پر اعتراض کررہے ہیں۔

وزیر اعظم کو مخاطب کرتے ہوئے ان کا کہنا تھا کہ آپ پورے پاکستان کے وزیراعظم ہے صرف پنجاب کے نہیں، کشمیر کے معاملے پر ہم سب متحد ہیں،نواز شریف مسئلہ کشمیر کے پیچھے پاناما پیپرز کو چھپانا چاہتے ہیں، انہوں نے کہا کہ وزیراعظم نے وعدہ کیا تھا کہ پاناما لیکس کے معاملے پر احتساب کیا جائے گا۔

بلاول بھٹو نے مزید کہا کہ سندھ میں تبدیلی لایا ہوں جلد پیپلز پارٹی میں تبدیلیاں لاؤں گا، 2018ء میں وزیراعظم پی پی پی کا ہوگا۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں