The news is by your side.

Advertisement

مہنگائی کے خلاف حکومتی کوششوں کے ثمرات نمایاں ہونے لگے

اسلام آباد: مارچ کے دوسرے ہفتے میں مہنگائی میں 0.57 فیصد کمی ریکارڈ کی گئی تاہم سالانہ بنیاد پر مہنگائی کی شرح 13.48 فیصد پر پہنچ گئی۔

تفصیلات کے مطابق ادارہِ شماریات پاکستان نے گزشتہ ہفتے کے مہنگائی اعداد و شمار جاری کر دیئے، جس میں بتایا گیا کہ گزشتہ ہفتے26 اشیا کی قیمتوں میں اضافہ،7 میں کمی اور 18 میں استحکام رہا۔

مارچ کے دوسرے ہفتے مہنگائی کی شرح میں 0.57 فیصد کمی ریکارڈ کی گئی تاہم سالانہ بنیاد پر مہنگائی کی شرح 13.48 فیصد پر آگئی۔

ادارہِ شماریات کا کہنا تھا کہ انڈے16روپے درجن اضافےسے 168کی سطح پرپہنچ گئے جبکہ کیلا3 روپے، چینی 2 روپے ، آلو ڈیڑھ روپے مہنگاہوا۔

اعدادو شمار کے مطابق آٹے کا 20 کلو تھیلا10روپے اور ٹماٹر 2روپےمہنگےہوئے جبکہ دال ماش 2روپے ، دال چنا 30پیسے اور دال مونگ 4 پیسے فی کلو مہنگی ہوئی۔

ادارہِ شماریات نے کہا کہ مٹن اور بیف کی قیمتوں میں بھی معمولی اضافہ دیکھا گیا تاہم چکن کی قیمت 263روپے کلو سے کم ہو کر 255 روپے کلو ہوگئی۔

رپورٹ کے مطابق ایل پی جی کا 11.67 کلو کا گھریلوسلنڈر 71روپے کم ہوا اور بجلی کے یونٹ کی قیمت میں 60پیسے کمی ریکارڈ کی گئی جبکہ لہسن 14روپے، گڑ اور دال مسور ایک روپے فی کلو گرام سستے ہوئے۔

خیال رہے 4 مارچ کو ختم ہونے والے ہفتے میں مہنگائی میں 0.6 فی صد اضافہ ریکارڈ کیا گیا تھا اور سالانہ بنیاد پر مہنگائی کی شرح 14.95 فی صد پر پہنچ گئی تھی۔

Comments

یہ بھی پڑھیں