site
stats
اے آر وائی خصوصی

کیا پلاسٹک سرجری اسلام میں جائز ہے؟

پلاسٹک سرجری کے حوالے سے مختلف باتیں زیرگردش رہتی ہیں کہ یہ حرام ہے یا حلال؟ اور کئی ذہنوں میں یہ سوال گردش کرتا ہے کہ سرجری کرانا دین میں جائز ہے کہ ناجائز؟ اس حوالے سے شریعت کے کیا احکامات ہیں؟

اے آر وائی کیو ٹی وی کے پروگرام ’’آپ کے مسائل کا حل پروگرام‘‘ میں ایک خاتون نے  مفتی صاحب کے سامنے پلاسٹک سرجری کروانے کے حوالے سے سوال دریافت کیا۔ خاتون نے استفسار کیا کہ کیا پلاسٹک سرجری کروائی جاسکتی ہے اور اس بارے میں شریعت کے کیا احکامات ہیں؟

خاتون کا سوال سننے کے بعد مفتی نے جواب دیا کہ ’’پلاسٹک سرجری اگر بدنمائی کو دور کروانے کے لیے کوئی شخص کرائے تو اُس کی اجازت دی گئی ہے تاہم خوبصورت نظر آنے کے لیے اس کی دین میں ممانعت ہے‘‘۔

شرعی حکم کیا ہے، ویڈیو دیکھیں

مفتی صاحب نے مزید ارشاد فرمایا کہ ’’اگر حسن یا پھر عمر چھپانے کے لیے کوئی شخص پلاسٹک سرجری کروائے تو شریعت مطہرہ میں یہ عمل پسندیدہ نہیں ہے اور اگر کوئی بوڑھا خضاب لگا کر بالوں کو اس لیے سیاہ کرتا ہے کہ وہ جوان دکھے تو اللہ کے نبی ﷺ نے ایسے شخص کو بوڑھے کوے سے تشبیہ دی ہے‘‘۔

Print Friendly, PDF & Email
20

Comments

comments

اس ویب سائیٹ پر موجود تمام تحریری مواد کے جملہ حقوق@2018 اے آروائی نیوز کے نام محفوظ ہیں

To Top