The news is by your side.

Advertisement

بیروت بندرگاہ پر امونیم نائٹریٹ کہاں سے آیا؟

بیروت: لبنان کے دارالحکومت بیروت میں بندرگارہ پر امونیم نائٹریٹ کی موجودگی کے سلسلے میں نیا انکشاف سامنے آ گیا ہے۔

غیر ملکی میڈیا کے مطابق امونیم نائٹریٹ کو 2013 میں جارجیا سے موزمبیق جانے والے ایک بحری جہاز میں لایا گیا تھا، لبنانی فرم بروڈی اینڈ ایسوسی ایٹس نے بتایا کہ جہاز میں تکنیکی خرابی ہو گئی تھی جس پر بیروت کی بندرگاہ پر اسے عارضی طور پر روک لیا گیا تھا۔

رپورٹ کے مطابق ایک لبنانی کمپنی نے جہاز کے مالک کے خلاف شکایت کر دی تھی جس پر حکام نے جہاز کو ضبط کر لیا، بندرگاہ حکام نے جہاز سے امونیم نائٹریٹ کو نکال کر اسے ایک ایسے گودام میں رکھا جس کی دیوراوں میں دراڑیں پڑ گئی تھیں۔

بیروت دھماکا کیسے ہوا؟ سنسنی خیز انکشافات

یہ بھی بتایا گیا کہ گودام میں سے عجیب و غریب بو آنے کے بعد سیکورٹی فورسز نے 2019 میں تحقیقات شروع کیں اور اس نتیجے پر پہنچے کہ ذخیرہ کیے ہوئے کیمیائی مادے کو وہاں سے ہٹانے کی ضرورت ہے، تاہم اس پر عمل درآمد کبھی نہیں کیا گیا، گزشتہ ہفتے گودام کی مرمت کا کام شروع کیا گیا تھا جس پر خدشات ظاہر کیے گئے کہ اسی کی وجہ سے دھماکے ہوئے ہوں گے۔

ذمہ دار کون؟

جب بیروت کی بندرگاہ پر امونیم نائٹریٹ ذخیرہ کیا جا رہا تھا تو بندرگاہ اور کسٹمز کے حکام کو اس کا علم تھا، لیکن ایک طویل عرصے کے دوران بھی اسے وہاں سے ہٹانے کے لیے کوئی اقدامات نہیں کیے گئے۔ یہی وجہ ہے کہ لبنانی وزیر اعظم حسن دیاب نے اس صورت حال کو ناقابل قبول قرار دیا جس کی وجہ سے یہ سانحہ پیش آیا۔

خیال رہے کہ متنازعہ بیانات کے لیے مشہور امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے دھماکوں کی شب ہی امریکی جنرلز کے حوالے سے کہہ دیا تھا کہ بیروت دھماکا کسی قسم کے بم کی وجہ سے ہوا ہوگا، تاہم امریکی فوج کے ترجمان نے کہا کہ ہمارے پاس اس سلسلے میں بتانے کے لیے کچھ نہیں۔

سانحے کے بعد

بیروت کو ڈزاسٹر زون قرار دے دیا گیا ہے، کرونا وائرس وبا کی وجہ سے معاشی بحران میں گرفتار لبنان کے صدر مشیل عون کے بیان کے مطابق 6.6 کروڑ ڈالر ایمرجنسی فنڈ قائم کیا جائے گا. فرانس، اردن، ایران سمیت کئی ممالک نے امداد کی پیش کش کی ہے۔

واضح رہے لبنان کے دارالحکومت بیروت میں گزشتہ ہفتے امونیم نائٹریٹ کی وجہ سے ہونے والے دھماکوں میں کم از کم 200 افراد ہلاک اور 7 ہزار زخمی ہوئے۔

Comments

یہ بھی پڑھیں