مریم نواز کو سلیوٹ کرنے والی اے ایس پی ارسلہ سلیم کون ہیں ؟ arsala-saleem
The news is by your side.

Advertisement

مریم نواز کو سلیوٹ کرنے والی اے ایس پی ارسلہ سلیم کون ہیں ؟

اسلام آباد : مریم نواز کو سلیوٹ کرنے والی اے ایس پی اسپیشل برانچ ارسلہ سلیم کو آمنہ علی ایڈوکیٹ کی جانب سے اظہار وجوہ کا نوٹس بھجوادیا گیا ہے جس میں 15 دن کے اندر عوام سے معافی مانگنے کا مطالبہ کیا گیا ہے۔

تفصیلات کے مطابق وزیراعظم کی صاحبزادی مریم نواز آج جے آئی ٹی کے سامنے پیش ہونے کے لیے جوڈیشل اکیڈمی اسلام آباد پہنچیں تو ڈیوٹی پر موجود ایس پی اسپیشل برانچ ارسلہ سلیم نے گاڑی اترتی ہوئی مریم نواز کو سلیوٹ کیا جسے میڈیا پر شدید تنقید کا نشانہ بنایا گیا۔

مریم نواز کو سلیوٹ کرنے پر عوامی ردعمل 


سیاسی جماعتوں اور عوام کی جانب سے اعتراض آنے پر ایڈوکیٹ آمنہ علی نے اے ایس پی ارسلہ سلیم کو اظہار وجوہ کا قانونی نوٹس بھیجا گیا ہے جس میں ان سے مریم نواز کو سلیوٹ کرنے کی وجہ معلوم کی گئی ہے اور اپنے اس اقدام پر قوم سے میڈیا کے ذریعے معافی مانگنے کا مطالبہ بھی کیا گیا ہے اور کہا گیا ہے کہ وہ سرکار کی ملازم ہیں نہ کہ مریم نواز کی جنہیں عوام کے ٹیکس سے تنخواہ دی جاتی ہے۔

ارسلہ سلیم کو اظہار وجوہ کا نوٹس جاری 


نوٹس کے مندرجات کے مطابق سرکاری عہدے پرہوتے ہوئے مریم نواز کوسلیوٹ کرنا مناسب نہیں تھا کیوں کہ مریم نواز کسی بھی قسم کا سرکاری و انتظامی عہدہ نہیں رکھتی ہیں اس لیے انہیں سلیوٹ کرنا غیر مناسب عمل ہے۔

نوٹس میں کہا گیا ہے کہ ارسلہ سلیم عوام کے ٹیکس سے تنخواہ وصول کرتی ہیں ، مریم نوازسے نہیں اس لیے انہیں سرکاری اصول و ضوابط اور نظم وضبط کی پابندی کا پورا خیال رکھنا چاہیئے۔

ارسلہ سلیم جوڈیشل اکیڈمی میں کیا کر رہی تھیں ؟ 


جہاں جوڈیشل اکیڈمی میں اے ایس پی ارسلہ سلیم کی موجودگی کو تنقید کا نشانہ بنایا جا رہا ہے وہیں دوسری جانب قانونی ماہرین کا کہنا ہے کہ کسی بھی خاتون کو تھانے، عدالت یا کسی تفتیشی عمل میں اکیلے طلب نہیں کیا جاسکتا۔

قانونی ماہرین کا کہنا ہے کہ مریم نواز کی جے آئی ٹی طلبی کے موقع پر قانون کے مطابق والدین یا سرپرست کا ہونا ضروری ہے اگر ایسا ممکن نہیں تو لیڈی پولیس کی موجودگی لازمی ہے شاید یہی وجہ ہے کہ اے ایس پی ارسلہ مریم کو یہ ذمہ داری سونپی گئی۔

ارسلہ سلیم کون ہیں ؟ 


یاد رہے کہ ارسلہ سلیم نے پہلی مرتبہ اس وقت توجہ حاصل کی جب کچھ عرصہ قبل طیبہ تشدد کیس میں یہی پولیس افسر کم سن ملازمہ طیبہ کی سپریم کورٹ اوراسلام آباد ہائی کورٹ میں پیشی کے دوران طیبہ کے ہمراہ ہوتی تھیں۔

خیال رہے اسلام آباد سے تعلق رکھنے والی ارسلہ سلیم آج کل سیکٹر جی الیون(11) کے رمنا پولیس اسٹیشن میں اسسٹنٹ سپریٹنڈنٹ پولیس (اے ایس پی)کی حیثیت سے تعینات ہیں،جہاں 300 مرد اور خواتین ان کے انڈر کمانڈ کام کر رہے ہیں۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں