The news is by your side.

Advertisement

سروسز اسپتال میں مریض کی ہلاکت کا معاملہ، قصور وار کون؟ رپورٹ تیار

لاہور:  صوبہ پنجاب کے دارالحکومت میں قائم سروسز اسپتال میں ڈاکٹروں کی مبینہ غفلت سے مریض کی ہلاکت کے معاملے پر اہم پیش رفت سامنے آئی ہے۔

تفصیلات کے مطابق لاہور کے سروسز اسپتال میں مریض کی موت کے حوالے سے ابتدائی رپورٹ تیار کرلی گئی جس میں ڈاکٹروں کو قصوروار قرار دیا گیا ہے۔ وزیر اعلیٰ پنجاب کے حکم پر یہ رپورٹ تیار کی گئی ہے۔

اس ضمن میں ابتدائی رپورٹ کی کاپی اے آر وائے نیوز نے حاصل کرلی۔ رپورٹ میں اسپتال کے 4 ڈاکٹرز کے خلاف پیڈا ایکٹ کی سفارش کردی گئی۔

رپورٹ میں ڈاکٹر سلمان حسیب، ڈاکٹر عمران بھٹی، ڈاکٹر محمود الحسن اور ڈاکٹر سلمان سرور کے خلاف ‘پیڈا ایکٹ’ کے تحت کارروائی کی سفارش کی گئی ہے۔

ڈاکٹروں پر تشدد کا معاملہ: سروسز اسپتال کے ڈاکٹرز کا مؤقف غلط نکلا

ایم ایس سروسز اسپتال ڈاکٹر احتشام نے واقعہ کی انکوائری رپورٹ سیکرٹری اسپیشلائزڈ ہیلتھ کو بھجوا دی۔ رپورٹ میں یہ بھی بتایا گیا ہے کہ مریض 5 بج کر 52 منٹ پر اپنے پاوں پر اسپتال آیا، 6 بج کر 43 منٹ پر مریض کے ڈیتھ سرٹیفکیٹ پر ریسیو ڈیتھ لکھ دیا گیا۔

ابتدائی رپورٹ کے مطابق مریض کی ڈیتھ کے بعد ینگ ڈاکٹرز نے ایمرجنسی بند کردی۔ ایم ایس سروس اسپتال کا کہنا ہے کہ مریض کی ہلاکت کی ذمہ داری ڈاکٹرز پر عائد ہوتی ہے۔

خیال رہے کہ گزشتہ روز لاہور کے علاقے سمن آباد کے رہائشی مریض حامد یاسین کی اسپتال میں ڈاکٹروں کی غفلت سے موت واقع ہوئی تھی جس کے بعد لواحقین نے شدید احتجاج ریکارڈ کرایا۔

Comments

یہ بھی پڑھیں