The news is by your side.

Advertisement

140 برس بعد بھیڑیوں کی واپسی

یورپی ملک نیدر لینڈز میں 140 برس بعد بھیڑیے دیکھے گئے۔ بھیڑیوں کی آبادی میں تقریباً خاتمے کے بعد اب اسے بھیڑیوں کی واپسی کہا جارہا ہے۔

ایک صدی قبل تک نیدر لینڈز میں بھیڑیوں کا بے تحاشہ شکار کیا گیا تھا، زیادہ تر بھیڑیوں کی ہلاکتیں کسانوں کے ہاتھوں ہوتی تھیں جو اپنے مویشیوں پر انہیں حملہ آور دیکھ کر انہیں مار دیتے تھے۔

نتیجتاً نیدر لینڈز سے بھیڑیوں کی آبادی ختم ہوگئی تھی، تاہم اب سنہ 2005 سے اکا دکا بھیڑیے مختلف جگہوں پر دکھائی دے رہے تھے۔

ماہرین ماحولیات نے جب اس حوالے سے جانچ پڑتال شروع کی تو انہوں نے دیکھا کہ یہ بھیڑیے جرمنی اور فرانس سے آرہے تھے۔

گزشتہ کچھ عرصے میں ماہرین نے کافی وقت تک 2 مادہ اور ایک نر بھیڑیے کو دیکھا، ان کا کہنا ہے کہ انہیں یہاں پر 6 ماہ کا عرصہ گزر گیا ہے اور ان کی یہیں پر موجودگی ثابت کرتی ہے کہ وہ اب یہاں مطمئن ہوگئے ہیں۔

دوسری جانب مقامی چرواہے بھیڑیوں کی واپسی سے خوش نہیں ہیں۔

ان کا کہنا ہے کہ بھیڑیے، ان کی بھیڑوں اور بکریوں پر حملے کرتے ہیں۔ ایسی صورت میں مال مویشی کے نقصان کے بعد انہیں حکومت کی جانب سے معاوضہ بھی دیا جاتا ہے۔

نیدر لینڈز کی وزارت ماحولیات کا کہنا ہے کہ وہ چاہتے ہیں بھیڑیے اپنے گھروں کو واپس لوٹیں اور دوسری جانب دیگر جانور بھی ان کے حملوں سے محفوظ رہیں۔ وہ ایسے اقدامات کرنا چاہتے ہیں جن سے چرواہے بھی مطمئن رہیں جبکہ بھیڑیے بھی اپنے فطری ماحول میں افزائش پاسکیں۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں