The news is by your side.

Advertisement

خواتین کے لیے،چہرے ،ہاتھ اور پاﺅں کا پردہ واجب نہیں، مولانا شیرانی

اسلام آباد: اسلامی نظریاتی کونسل کے چیئر مین مولانا شیرانی نے کہا ہے کہ خواتین کے لیے،چہرے ،ہاتھ اور پاﺅں کا پردہ مستحب ہے واجب نہیں ہے۔

پاکستان میں اسلامی نظریاتی کونسل کا قیام 1962ء میں عمل میں آیا تھا اور اس ادارے کا بنیادی کام ملکی پارلیمان کی مشاورت ہے تاکہ مقننہ کی طرف سے کی جانے والی قانون سازی کے اسلامی شرعی قوانین سے ہم آہنگ ہونے کو یقینی بنایا جا سکے۔

کونسل کے سربراہ مولانا محمد خان شیرانی نے خواتین کو یہ مشورہ بھی دیا ہے کہ وہ اخلاقی ضابطوں کی پاسداری کرتے ہوئے معاشرے میں محتاط رویے کا مظاہرہ کریں۔

خواتین کے حقوق کی رہنما فرزانہ باری نے اسلامی نطریاتی کونسل کے بیان کا خیر مقدم کرتے ہوئے  اسے ’بہت دلچسپ‘ قرار دیا۔

فرزانہ باری اے ایف پی سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ یہ ایک اچھا اشارہ ہے مذہبی شخصیات نے بظاہر یہ محسوس کرنا شروع کر دیا ہے کہ اس وقت ان کے درست اور جائز ہونے کو ایک چیلنج کا سامنا ہے اور یہ فتویٰ اسی ساکھ کو بہتر بنانے کی کوشش ہے۔

فرزانہ باری کے مطابق، ’’اگر توہین مذہب سے متعلق سپریم کورٹ کے فیصلے کو دیکھیں تو محسوس ہوتا ہے کہ آرتھوڈوکس مذہبی رہنما تھوڑا سا پیچھے ہٹنے پر مجبور ہو گئے ہیں۔

ایک سوال پر انہوں نے کہا کہ پاکستان کے سیاسی نطام میں خلا موجود ہے اور الیکشن کے ذریعے یہ خلا پر نہیں ہو گا کیوں کہ کوئی سوشل ازام اور کوئی نیشنل ازم کے نام پر ووٹ مانگتا ہے۔

Print Friendly, PDF & Email

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں