The news is by your side.

Advertisement

سمندر پر بنایا جانے والا دنیا کا طویل ترین پُل کھول دیا گیا

بیجنگ: چین اور ہانگ کانگ کے مابین سمندری راستے پر تعمیر کیا جانے والا دنیا کا طویل ترین پُل 9 برس بعد آمد ورفت کے لیے کھول دیا گیا۔

تفصیلات کے مطابق دو ممالک (چین اور ہانگ کانگ) کی حکومتوں نے آمد و رفت کو مزید آسان بنانے کے لیے اس پروجیکٹ پر کام 9 برس قبل شروع کیا ویسے تو پُل کو 2016 میں مکمل ہونا تھا مگر کئی تنازعات کی وجہ سے اس کی تعمیر کے دورانیہ اور بجٹ میں اضافہ ہوا۔

پُل کی تعمیر پر پندرہ کھرب امریکی ڈالر کے اخراجات آئے جبکہ اس کو 9 برس کے عرصے میں مکمل کیا گیا، پروجیکٹ کی تعمیر کے دوران چین اور ہانگ کانگ کے 9 مزدور ہلاک ہوئے جن میں سے اکثر سمندر میں ڈوب کر ہلاک ہوئے۔

دنیا کا طویل ترین پُل تیار ہونے کے بعد چین کا صوبہ مکاؤ اور ہانگ کانگ کے دو مخصوص انتظامی علاقے چین کے مین لینڈ سے جڑ گئی، ماہرین کے مطابق پل کو قانونی اور سیاسی حصوں میں تقسیم کیا گیا ہے۔

مزید پڑھیں: چین میں دنیا کا بلند ترین پُل تعمیر

منگل کے روز پُل کا افتتاح ہانگ کانگ میں کیا گیا جس کے بعد چین نے بھی اسے عوام کے لیے کھول دیا، حکام کے مطابق پُل پر کمرشل گاڑیاں اور مسافر بردار بسیںچلانے کی اجازت ہوگی جبکہ چھوٹی گاڑیوں کے ڈرائیورز کو خصوصی پرمٹ حاصل کرنا ہوگا۔

ہانگ کانگ یا چین سے پُل کا استعمال کرنے والے افراد کے لیے راستے میں دو امیگریشن مراکز بھی قائم کیے گئے جہاں مسافر اپنی دستاویزات کی جانچ پڑتال کروائیں گے۔

قبل ازیں دونوں ممالک کے شہری سمندری راستے کے ذریعے آمدورفت کرتے تھے جس کو طے کرنے میں تقریباً چار گھنٹے درکار تھے البتہ اب یہی مسافت 30 منٹ میں طے کرلی جائے گی۔

زوہائی مکاؤ پُل کی لمبائی 54 کلومیٹر ہے جو چین اور ہانگ کانگ کے 9 شہروں کو آپس میں جوڑے گا،  ایک محتاط اندازے کے مطابق پُل کی تعمیر سے 70 ارب ڈالر کی بچت ہوگی اور یومیہ ہزاروں افراد استفادہ کریں گے۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں