The news is by your side.

Advertisement

ڈی چوک اور ریڈ زون میں جلسے روکنے کی درخواست پر تحریری حکمنامہ جاری

اسلام آباد: ڈی چوک اور ریڈ زون میں سیاسی جماعتوں کے جلسے روکنے کی درخواست پر تحریری حکمنامہ جاری کر دیا گیا۔ حکمنامہ اسلام آباد ہائی کورٹ کے جسٹس عامر فاروق نے جاری کر دیا۔

تحریری حکمنامہ میں کہا گیا ہے کہ دائر درخواست کا معاملہ ایک عوامی مفاد کا ہے، جواب دہندگان نمبر 6 سے 9 کو پروفارما جواب دہندگان کے طور پر شامل کرنے کے بارے میں استفسار عدالت نے کیا، اس کے جواب میں آصف گجر ایڈووکیٹ نے ریفرڈ کو حذف کرنے کی درخواست کی، عدالت نے حذف کرنے کی اجازت دی۔

حکمنامے کے مطابق سپریم کورٹ، فیڈرل شرعت کورٹ اور ہائی کورٹ کو بذریعہ رجسٹرار جواب دہندگان کی صف سے حذف کر دیا جاتا ہے، رجسٹرار آفس کو درخواست پر کارروائی میں اس طرح کا گھٹیا رویہ اپنانے پر سرزنش کی گئی ہے، کیونکہ اس بات کو رجسٹرار آفس نے مکمل طور پر نظر انداز کر دیا گیا تھا، سپریم کورٹ اور فیڈرل شرعت کورٹ کو بذریعہ رجسٹرار فریق بنایا گیا، آئینی ادارے ہیں۔

اس میں مزید کہا گیا کہ آصف گجر ایڈووکیٹ نے کہا کہ پرنٹ اور الیکٹرانک میڈیا معلوم ہوا ہے کہ مختلف سیاسی جماعتوں نے ڈی چوک ریڈ زون پر جلسے کرنے کا اعلان کیا ہے، آصف گجر ایڈووکیٹ کے مطابق اسلام آباد کے شہریوں کے لئے سنگین صورتحال پیدا ہو سکتی ہے، تمام اسمبلیاں سیاسی اور مذہبی نوعیت کے اجتماعات اسلام آباد میں ایک مخصوص جگہ پر ہونے چاہئیں، آئین سے حلف اور وفاداری ایک لازمی امر ہے اور کوئی بھی غیر قانونی سرگرمی آئین کے آرٹیکل 5 کی خلاف ورزی ہو گی۔

تحریری حکمنامے میں کہا گیا کہ قانونی اجتماع یا اسمبلی ایک بنیادی حق ہے جیسا کہ آئین میں درج ہے، درخواست گزار آصف گجر کو پوری توجہ سے سنا گیا، ایک شخص کا بنیادی حق ہے، آئین کے آرٹیکل 9 کے تحت وہ کرے، بنیادی حقوق کے حوالے سے توازن برقرار رکھنا آج کی حکومت اور ریاست کا کام ہے، حکومت اس بات کو یقینی بنائے گی کہ معاشرے میں ہم آہنگی پیدا کرنے اور توازن برقرار رکھنے کے لیے معاشرے کے تمام دھڑے/شہری اپنے متعلقہ بنیادی حقوق سے لطف اندوز ہو سکیں۔

اس میں مزید کہا گیا کہ سیاسی، مذہبی یا سماجی اجتماع ہر مہذب معاشرے میں ایک معمول ہے، اجتماعات پرامن، بغیر ہتھیاروں کے اور آئین اور قانونی دفعات کے مطابق ہوں، کوئی بھی اسمبلی، جو اس طرح کی دفعات کی خلاف ورزی کرتی ہے، اسے ‘قانونی’ قرار نہیں دیا جا سکتا، مغربی پاکستان مینٹیننس آف پبلک آرڈر آرڈیننس 1960 میں مجسٹریٹ یا دیگر مجاز اتھارٹی سے اجازت حاصل کرنے کا پابند کیا گیا ہے، اس سلسلے میں کسی بھی شخص یا افراد کی انجمن کو 1960 کے آرڈیننس کے سیکشن کے تحت کسی خاص جگہ پر اجتماع کے لیے اجازت لینا ہو گی، سوائے اس جگہ کے جسے ریڈ زون قرار دیا گیا ہے یعنی جہاں اجتماع ممنوع ہے، سنگین نقصان کے خطرے کے بارے میں عرضی گزار کی درخواست میں اٹھائی گئی تشویش غلط نظر نہیں آتی، جلسہ جلوس وزیر داخلہ، سیکرٹری داخلہ، چیف کمشنر، ڈپٹی کمشنر اور آئی جی پولیس کے خصوصی دائرہ کار میں ہے۔

حکمنامے کے مطابق سیاسی جماعتوں کی جانب سے جلسہ کے لئے موصول ہونے والے درخواست پر غور کرتے ہوئے، تمام شہریوں کے بنیادی حقوق کے تحفظ کے لیے اپنے آئینی فرض کا خیال رکھیں، شہریوں کو ہونے والی کسی بھی مشکل یا املاک کو پہنچنے والے نقصان کے لیے مشترکہ طور پر اور الگ الگ جوابدہ ہوں گے، درخواست دہندگان چاہے حکمران جماعت یا اپوزیشن جماعتوں سے ہوں، انتظامیہ امن عامہ کو برقرار رکھنے کے لیے مقرر کردہ ضابطوں اور پابندیوں کی سختی سے تعمیل کریں گے، رجسٹرار ہائیکورٹ اس حکم کی نقول مذکورہ بالا پبلک آفس ہولڈرز/ فنکشنری کو فیکس اور خصوصی میسنجر کے ذریعے بھیجیں، درخواست گزار کی جانب سے یہ خدشہ کہ ان کے بنیادی حق کو کسی بھی طرح سے مجالس اور اسمبلیوں کے ذریعے مجروح کیا جائے گا، احکامات کے ساتھ درخواست کو نمٹا دیا جاتا ہے۔

Comments

یہ بھی پڑھیں