The news is by your side.

Advertisement

سابق وزیراعظم گیلانی کو دی گئی 5 سالہ نا اہلی کی سزا مکمل

ملتان : سابق وزیراعظم اور پیپلز پارٹی کے رہنما یوسف رضا گیلانی کی نااہلی کی 5 سالہ مدت آج ختم ہوگئی، یہ پابندی سابق چیف جسٹس افتخار محمد چوہدری کی عدالت نے لگائی تھی۔

تفصیلات کے مطابق سابق وزیراعظم یوسف رضا گیلانی کی نا اہلی کی سزا کی میعاد پانچ سال مکمل ہونے پر آج ختم ہوگئی جس کے بعد اب وہ انتخابات میں بھی حصہ لے سکتے ہیں اور کسی بھی عوامی اور انتظامی عہدے کے لیے اہل ہوں گے۔

سپریم کورٹ کے 7 رکنی بینچ نے وزیراعظم یوسف رضا گیلانی کو این آر او عمل درآمد کیس میں عدالتی فیصلے پر عمل نہ کرنے اور توہین عدالت کا مرتکب ہونے پر 26 اپریل کو سزا سنائی تھی تاہم اس وقت کے وزیراعظم نے مستعفی ہونے سے انکار کرتے ہوئے موقف اختیار کیا تھا کہ عدالتی فیصلے سے میری نااہلی کا کوئی تعلق نہیں۔

آٹھ مئی 2012ء کو سپریم کورٹ نے جسٹس ناصر الملک کا تحریر کردہ 77 صفحات پر مشتمل تفصیلی فیصلہ جاری کیا جس کے بعد ایڈووکیٹ محمد اظہر صدیقی نے سپریم کورٹ میں وزیرِاعظم کی نااہلی کی درخواست دائر کی جس میں کہا گیا کہ سزا یافتہ شخص ملک میں وزارتِ عظمٰی کا قلم دان نہیں رکھ سکتا۔

اس وقت کی اسپیکر قومی اسمبلی فہمیدہ مرزا نے وزیراعظم یوسف رضا گیلانی کی نا اہلی کا نوٹی فکیشن الیکشن کمیشن کو بھیجنے سے انکار کرتے ہوئے رولنگ دے دی جس کے بعد رولنگ کے خلاف مسلم لیگ (ن) اور تحریک انصاف نے سپریم کورٹ سے رجوع کیا تھا۔

بعد ازاں سپریم کورٹ نے یوسف رضا گیلانی کو 19 جون 2012ء میں توہین عدالت کی وجہ سے 5 سال کے لیے نا اہل قرار دیا تھا اور کہا کہ سزا کا اطلاق 26اپریل 2012 سے ہوگا جس کے بعد یوسف رضا گیلانی کو اپنے گھر کی راہ لینی پڑی اور راجہ پرویز اشرف نے وزیراعظم کا قلم دان سنبھالا۔

سابق وزیراعظم یوسف رضا گیلانی کو 2012 میں اس وقت کے صدر آصف زرداری کے خلاف سوئس حکومت کو خط نہ لکھنے کی پاداش میں 30 سیکنڈز عدالت میں کھڑے رہنے کی بھی سزا دی گئی تھی اور بعد ازاں توہین عدالت کیس میں انہیں پانچ سال کے لیے نااہل قرار دے دیا گیا تھا۔

Print Friendly, PDF & Email

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں