یمن جنگ کی روک تھام کے لیے امن مذاکرات کا آغاز -
The news is by your side.

Advertisement

یمن جنگ کی روک تھام کے لیے امن مذاکرات کا آغاز

اسٹاک ہوم: سویڈن میں یمن کی جنگ کے خاتمے کے لیے اہم مذاکرات کا آغاز ہوگیا ہے ،  یمن میں تین سال سے جاری جنگ انسانی المیے کی شکل اختیار کرچکی ہے۔

تفصیلات کے مطابق اقوام متحدہ کے خصوصی مندوب کا کہنا ہے کہ یمن جنگ کی روک تھام کے لیے منعقد ہونے والے یہ مذاکرات مشرقِ وسطیٰ کے امن کے لیے  سنگِ میل کی حیثیت رکھتے ہیں۔

اقوام متحدہ کے مندوب مارٹن گرفتھز نے اس موقع پر اعلان کیا کہ ان مذاکرات میں دونوں فریقین کے درمیان قیدیوں کے تبادلے کا معاہدہ ہوگیا ہے  جس سے ہزاروں خاندان اپنے پیاروں سے مل سکیں گے۔

یمن کی گہرائیوں سے برآمد ہونے والی آگ

اقوام متحدہ کی ٹیم یمنی حکومت اور حوثی باغیوں کے ساتھ مل کر کام کررہی ہے کہ یمن میں کسی طرح قیامِ امن کو یقینی بنایا جاسکے، یاد رہے کہ اس جنگ سے دنیا کا سب سے بڑاقحط  انسانی المیے کی شکل میں جنم لے رہا ہے، ہزاروں افراد مارے جاچکے ہیں جبکہ لاکھوں بھوک کے ہاتوں دم توڑ رہے ہیں۔

سنہ 2016 کے بعد یہ پہلا موقع ہے کہ یمنی حکومت اور حوثی قبائل ایک بار پھر مذاکرات کی میز پر آرہے ہیں۔ اس سے قبل حوثی قبائل کی عدم دلچسپی کے سبب مذاکرات ناکام ہوچکے ہیں۔

یاد رہے کہ کچھ عرصہ قبل امریکا نے جنگ کے دونوں مرکزی فریقوں سے مطالبہ کیا تھا کہ وہ جنگ بند کرکے تیس دن کے اندرمذاکرات کی میز پر آئیں ۔ امریکی وزیردفاع جم میٹس کی جانب سے سامنے آنے والے اس مطالبے کی برطانیہ نے بھی حمایت کی ہے اور کہا ہے کہ مذاکرات ہی اس تنازعے کا واحد حل ہیں۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں