young-doctors مذاکرات ناکام، ینگ ڈاکٹرزکا چوتھے روزبھی احتجاج، مریض پریشان
The news is by your side.

Advertisement

مذاکرات ناکام، ینگ ڈاکٹرزکا چوتھے روزبھی احتجاج، مریض پریشان

لاہور : ینگ ڈاکٹروں کی ہڑتال چوتھے روزبھی جاری ہے، محکمہ صحت کے ساتھ پے در پے مذاکرات کے بعد بھی معاملات طے نہ پا سکے، اب تک 38 ہڑتالی ڈاکٹروں کو ملازمت سے برطرف کیا جا چکا ہے۔

تفصیلات کے مطابق ینگ ڈاکٹرز اور محکمہ صحت کے درمیان طویل مذاکراتی نشست بے نتیجہ ختم ہونے کے بعد وائی ڈی اے نے دوبارہ ایمرجنسی سروس بند کرنے اور لانگ مارچ کرنے کی دھمکی دی ہے۔

دوسری جانب ہسپتالوں کی او پی ڈی میں ڈاکٹرز موجود نہ ہونے سے مریض خوار ہوگئے، اسپتالوں میں آپریشن بھی ملتوی ہونے لگے۔

محکمہ صحت نے ہڑتالی ڈاکٹروں کے خلاف محکمانہ کارروائی کا آغاز کرتے ہوئے اب تک 38 ڈاکٹروں کو برطرف کردیا ہے تاہم ینگ ڈاکٹرز بضد ہیں کہ وہ کسی صورت اپنے مؤقف سے پیچھے نہیں ہٹیں گے۔


مزید پڑھیں: ینگ ڈاکٹرزکا احتجاج، پولیس کا لاٹھی چارج،  متعدد گرفتار


دوسری جانب لاہورہائیکورٹ میں لاہور کے ایک شہری کی جانب سے احتجاج کرنے والے ینگ ڈاکٹرز کے خلاف کارروائی کے لئے درخواست دائر کر دی گئی ہے۔


مزید پڑھیں: لاہورمیں ینگ ڈاکٹرز کی ہڑتال بدستور جاری


درخواست میں کہا گیا ہے کہ قانون کے تحت ڈاکٹرز کسی بھی صورت سروسز بند نہیں کر سکتے، لہٰذا ڈاکٹرز کی ہڑتال کو غیر قانونی قرار دیتے ہوئے ہڑتالی ڈاکٹرز کے خلاف کارروائی کرنے اور آئی جی پولیس پنجاب کوان کے خلاف مقدمات درج کرنے کا حکم دے۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں