site
stats
عالمی خبریں

برمنگھم یونیورسٹی کی لائبریری سے 1370 سال پرانا قرآن کا قدیم ترین نسخہ دریافت

برمنگھم : برطانیہ کی برمنگھم یونیورسٹی کی لائبریری میں 1370 سال پرانا قرآن کا قدیم ترین نسخہ دریافت ہوا ہے، قرآن کا یہ نسخہ یونیورسٹی کی لائبریری میں تقریباً ایک صدی سے پڑا ہوا تھا مگر کسی کی بھی اس جانب توجہ نہیں گئی۔

نسخے کی دریافت پر برٹش لائبریری کے ماہر ڈاکٹر محمد عیسی نے خوشی کا اظہار کیا اور کہا کہ یہ بہت دلچسپ دریافت ہے اوراس سے مسلمان بہت خوش ہوں گے، اس قدیم نسخے کو ایک پی ایچ ڈی کرنے والے طالب علم نے دیکھا، جس کے بعد اس کا ریڈیو کاربن ٹیسٹ  کرانے کا فیصلہ کیا، ٹیسٹ میں حیرت انگیز انکشاف ہوا کی یہ نسخہ تیرہ سوسال قدیم ہیں ۔

برمنگھم یونیورسٹی کے عیسائیت اور اسلام کے پروفیسر ڈیوڈ تھامس کا کہنا ہے کہ اس تاریخ سے یہ کہا جا سکتا ہے کہ یہ اسلام کے چند سال بعد کا نسخہ ہے، جسے بھیڑ یا بکری کی کھال پر لکھا گیا ہے اور اس بات کے قوی امکانات ہیں کہ جس نے بھی یہ لکھا وہ شخص پیغمبر اسلام (صلی اللہ علیہ وسلم)کے وقت حیات تھا۔

یونیورسٹی کی ڈائریکٹر سوزن وورل کا کہنا ہے کہ تحقیق دانوں کو اندازہ بھی نہ تھا کہ یہ دستاویز اتنی قدیم ہوگی،  ہمارے لئے یہ نہایت خوشی کی بات ہے کہ  ہمارے پاس قرآن کا دنیا میں قدیم ترین نسخہ موجود ہے بہت خاص ہے۔

ان کا کہنا ہے کہ  کافی اعتماد سے یہ کہا جاسکتا ہے کہ قرآن کا جو حصہ اس چمڑے پر لکھا گیا ہے کہ وہ پیغمبر اسلام کے گزر جانے کے دو دہائیوں کے بعد کا ہےجو نسخہ ملا ہے وہ موجودہ قرآن کے قریب تر ہے جس سے اس بات کو تقویت ملتی ہے کہ قرآن میں کوئی تبدیلی نہیں کی گئی اور وہ ویسا ہی جیسے کہ نازل ہوا قرآن کا یہ نسخہ حجازی لکھائی میں لکھا گیا ہے جس طرح عربی پہلے لکھی جاتی تھی۔

برمنگھم کی مقامی مسلمان آبادی نے اس نسخے کی دریافت پر خوشی کا اظہار کیا ہے۔ یونیورسٹی کا کہنا ہے کہ اس نسخے کی جلد نمائش کی جائے گی۔

Print Friendly, PDF & Email
20

Comments

comments

اس ویب سائیٹ پر موجود تمام تحریری مواد کے جملہ حقوق@2018 اے آروائی نیوز کے نام محفوظ ہیں

To Top