site
stats
پاکستان

سیلاب ہیررانجھا کے شہر جھنگ کی دہلیزپر پہنچ گیا

جھنگ : بھارت سے آنے والا سیلاب جھنگ کی دہلیز پر پہنچ گیا  ہے، جسے بچانے کیلئے اٹھارہ ہزاری بند توڑنے کی تیاریاں مکمل کرلی گئیں ہیں ، منہ زور لہروں نے آج بھی کئی بستیاں صفحہ ہستی سے مٹادیں۔

سپر فلڈ اب پنجاب بھر میں تباہی مچانے کے درپے ہے، ہیر رانجھا کا شہر جھنگ سیلابی ریلوں کی تند و تیز موجوں کا مقابلہ کرنے سے قاصر ہے، سیلابی ریلے میں تین افراد بہہ گئے، جس میں سے دو کی لاشیں مل گئیں ہیں، جھنگ چنیوٹ روڈ غرقِ آب ہونے سے زمینی رابطہ کٹ چکا ہے، پکے والا کے قریب ریلوے ٹریک سیلابی پانی میں بہہ گیا، جھنگ سے پنڈی ریلوے سروس معطل ہوگئی ہے۔

چنیوٹ کے قریب سیلابی پانی بوآنہ شہر میں داخل ہوگیا ،چنیوٹ اور بوآنہ کا زمینی رابطہ منقطع ہوگیا ہے، دریائے جہلم سے ملحقہ پیالہ بند میں تریموں کے مقام پر شگاف پڑگیا، ضلع جھنگ کے قصبوں اٹھارہ ہزاری ، ھنانا، جمال والا، جبوآنہ، کوٹ مراد، علی کھٹانہ، جوسہ اور گڑھ مہاراجہ میں شدید سیلاب کا خطرہ ہے، لوگوں کو علاقہ خالی کرنے کی ہدایت کر دی گئی ہے۔

جلال پور بھٹیاں میں ایک لاکھ ایکڑ اراضی کا رقبہ زیرِآب آ گیا ہے، حافظ آباد کے دو سو چالیس میں سے دو سو دیہات غرقِ آب ہوگئے، رات گئے دریائے چناب میں ساڑھے چھ لاکھ کیوسک سیلابی ریلہ ضلع جھنگ کی حدود میں داخل ہوا اور تباہی مچ گئی، دریائے چناب کا ساڑھے چھ لاکھ کیوسک کا سیلابی ریلہ ان ہیڈ تریموں سے گزرے گا، پنڈی بھٹیاں میں سیلاب کے ماروں نے موٹروے کے اسپل ویز کھول دیئے۔

پانی شہر میں داخل ہوگیا، دریائے چناب کے سیلابی ریلے میں کوٹ مومن کے بیالس دیہات زیرِ آب آگئے، ستر ہزار ایکڑ سے زائد رقبے پر کھڑی فصلیں تباہ ہوگئیں ہیں، پانچ ہزار مویشی تند و تیز موجوں کی نذر ہوگئے ہیں، کوٹ مومن کے لوگوں نے چھتوں اور درکٹوں پر پناہ لے رکھی ہے۔

ساہیوال میں دریائے راوی میں کٹاؤ پڑ گیا، موضع داد بلوچ میں اکیس مکان زمین بوس ہوگئے جبکہ بہاولنگر کے نواحی علاقے زیرِ آب آچکے ہیں۔

Print Friendly, PDF & Email
20

Comments

comments

اس ویب سائیٹ پر موجود تمام تحریری مواد کے جملہ حقوق@2018 اے آروائی نیوز کے نام محفوظ ہیں

To Top